.

احمد جربا شامی اپوزیشن اتحاد کے دوبارہ سربراہ منتخب

جنیوا ٹو میں شرکت یا عدم شرکت کا فیصلہ آج متوقع

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

شام میں اپوزیشن کے قومی اتحاد نے اپنی مجلس عمومی کے ایک اجلاس میں ایک مرتبہ پھر احمد جربا کو اپنا سربراہ منتخب کر لیا ہے۔ اس امر کا باضابطہ اعلان شامی حزب اختلاف نے ایک بیان میں کیا ہے۔ احمد جربا کو 65 ووٹ ملے جبکہ ان کے مد مقابل کو 13 ووٹ ملے۔

احمد جربا کو اپوزیشن اتحاد نے پہلی مرتبہ جولائی 2013 میں اپنا سربراہ چنا تھا۔ انہیں سعودی عرب کے قریب سمجھے جاتے ہیں۔ آئندہ چھ ماہ کیلیے پھر سے اس منصب پر رہیں گے۔

احمد جربا کو شامی اپوزیشن اتحاد کا دوبارہ سربراہ ایک ایسے موقع پر چنا گیا ہے، جب جنیوا میں شام کے بارے میں دوسری امن کانفرنس کے انعقاد میں صرف دو ڈھائی ہفتے باقی ہیں۔ اس امن کانفرنس میں بشار رجیم اور اپوزیشن کو ایک میز پر لانے کی کوشش کی جارہی ہے۔

اپوزیشن اتحاد نے اپنے سربراہ کے انتخاب کے بعد آج پیر کو اس بارے میں فیصلہ کرنا ہے کہ جنیوا ٹو میں شرکت کی جائے یا نہیں۔ واضح رہے شامی اپوزیشن کا ایک اہم حصہ شامی قومی کونسل پہلے ہی جنیوا ٹو کے بائیکاٹ کا فیصلہ کر چکا ہے۔

شامی قومی کونسل کے سمیر ناشر کے مطابق ''احمد جربا بھی جنیواٹو میں شرکت کے مخالف ہیں۔'' شامی اپوزیشن اتحاد کے جاری کردہ بیان کے مطابق احمد جربا کو صدر منتخب کرنے کے علاوہ تین نائب صدور بھی منتخب کیے ہیں۔ تاہم سیکرٹری جنرل کا فیصلہ ابھی نہیں ہو سکا ہے۔

چوالیس سالہ احمد جربا سنی مسلمان ہیں جنہوں نے عرب دنیا اور مغربی ممالک کو اس بات پر قائل کیا ہے کہ باغیوں کو اسلحہ دیا جانا چاہیے۔ دوسری جانب مسلح باغیوں میں یہ احساس پایا جاتا ہے کہ اپوزیشن اتحاد ان کی نمائندگی کرنے میں کامیاب نہیں ہو سکا ہے۔