.

مرسی نواز رپورٹ نشر ہونے پر"نائل" ٹی وی کا چیئرمین برطرف

شعبہ پروگرام کے پانچ دیگرعہدیدار کام سے روک دیئے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

مصر کے نائل ٹیلی ویژن پر معزول صدر ڈاکٹر محمد مرسی کے کارناکوں پر مبنی ایک دستاویزی فلم غلطی سے نشر ہونے سے ٹی وی کے چیئرمین میرفت محسن کو ان کے عہدے سے ہٹا دیا گیا ہے جبکہ پروگرام سیکشن سے وابستہ پانچ دیگر عہدیداروں کو بھی انتظامی امور سے ہٹا کر ادارتی شعبے میں لگا دیا گیا ہے۔

العربیہ ڈاٹ نیٹ کے مطابق معزول صدر ڈاکٹرمحمد مرسی حکومت کی ایک سالہ کارکردگی کے بارے میں ایک رپورٹ سابق وزیر اطلاعات صلاح عبدالمقصود کے دور میں تیار کی گئی تھی جس میں ڈاکٹر محمد مرسی کی حکومت کی کامیابیوں کا تذکرہ کیا گیا تھا۔

رپورٹ کے مطابق ماسبیرو میں قائم مصری براڈ کاسٹک کارپوریشن کے دفترمیں گذشتہ اتوار کو اس وقت غیرمعمولی ہلچل پیدا ہو گئی جب پتہ چلا کہ Nile TV پر سابق برطرف صدر ڈاکٹرمحمد مرسی کی حمایت میں ایک رپورٹ نشر ہوگئی ہے۔ ٹی وی کی خاتون ڈائریکٹر نیوز صفاء حجازی نے بتایا کہ غلط رپورٹ نشر کرنے اور پیشہ ورانہ امور کی انجام ہی میں کوتاہی برتنے پر پراگرامنگ سیکشن کے پانچ دوسرے عہدیداروں کو بھی تین ماہ کے لیے اپنے شعبے میں کام سے روک دیا گیا ہے۔ وہ صرف ادارتی فرائض انجام دے سکیں گے۔

مسز صفاء حجازی نے الزام لگایا ہے کہ برطرف چیئرمین میرفت محسن کا ٹی وی کی انتظامیہ اور ادارے کے سرکردہ ملازمین پر کوئی کنٹرول نہیں تھا۔ ٹی وی کو مشکل میں ڈالنے کی تمام تر ذمہ داری میرفت محسن پرعائد ہوتی ہے۔ انہوں نے کہا کہ اگر "غلطی" سے معزول صدر کی حمایت میں کوئی رپورٹ نشر کی جا سکتی ہے تو کل کو کالعدم تنظیم اخوان المسلمون کی چارانگلیوں والے نشان" رابعہ" کی علامت بھی ایک دوسری غلطی سے دکھائی جا سکتی ہے۔

ٹی وی کے قائم مقام چیئرمین سامح رجائی نے العربیہ ڈاٹ نیٹ سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ وہ ادارے کے انتظامی معاملات بالخصوص نشریات کے شعبے کو اپنی مضبوط گرفت میں رکھیں گے تاکہ آئندہ اس نوعیت کا واقعہ دوبارہ رونما نہ ہو۔