.

جنرل سیسی نے مصر کا صدر بننے کا عندیہ دے دیا

صدارت کیلئے عوامی مطالبہ اور فوجی تائید بنیاد ہوگی: سیسی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

مصر کے سرکاری اخبارالاہرام نے مصر کے اگلے صدارتی انتخابات کیلئے فوج کے سربراہ جنرل عبدالفتاح السیسی کے صدارتی امیدوار بننے پر آمادگی کی تصدیق کی ہے تاہم کہا ہے کہ وہ صرف اسی صورت صدر بننا پسند کریں گے اگر فوج اور عوام انہیں اس منصب پر دیکھنا پسند کریں گے۔

جنرل سیسی کے الفاظ کا حوالہ دیتے ہوئے اخبار نے لکھا ہے ''اگر میں نے خود کو نامزد کیا تو اس کی بنیاد ایک عوامی مطالبہ اور فوج کی طرف سے تائید ہوگی۔ جنرل سیسی نے اس امر کا اظہار ایک خالص فوجی تقریب میں کیا۔ واضح رہے جنرل سیسی عبوری حکومت میں وزیر دفاع کا منصب سنبھالے ہوئے ہیں اور عبوری حکومت انہی کی تائید اور حمایت سے قائم ہوئی ہے۔

انہوں نے ایک فوجی تقریب میں یہ بات کہہ کر ایک جانب اپنی زیر کمان فوج کو اپنی خواہش سے باضابطہ آگاہ کر دیا ہے دوسری جانب اپنی فوجی ٹیم کے اس بارے میں اپنے ساتھ ہونے کا بھی تاثر دیا ہے۔

مصر میں یہ عمومی تاثر پایا جاتا کہ جنرل سیسی ایک اہم امیدوار ہوںگے۔ لیکن انہوں نے اس بارے میں اس سے پہلے کوئی کھلا اظہار نہیں کیا تھا۔ سرکاری اخبار کے مطابق فوجی تقریب کے شرکاء نے جنرل سیسی کی صدارت کے ذکر پر نعرے لگائے ''ہم آپ کے ساتھ ہیں۔''

قاہرہ میں موجود ''العربیہ'' کے نمائندے ابوالاعظم کا کہنا ہے کہ ''سیسی نے اپنے صدر بننے کے بارے میں ابھی حتمی فیصلہ نہیں کیا ہے۔'' جنرل سیسی نے اس فوجی تقریب سے عوام کو مخاطب ہوتے ہوئے یہ بھی کہا ہے '' عوام نئے دستور کی منظوری کیلئے ریفرنڈم میں بھر پور انداز سے حصہ لیں۔'' انہوں ریفرنڈم کے راستے کو ترقی کا زینہ بتایا۔

واضح رہے جنرل سیسی نے تین جولائی 2013 کو مصر کے پہلے جمہوری صدر کا تختہ الٹ کر سامنے آئے اور ان کی نگرانی میں عبوری حکومت قائم کی گئی۔ جولائی سے اب تک معزول صدر مرسی کے ایک ہزار سے زائد حامی مظاہرین ہلاک ہو چکے ہیں جبکہ اخوان المسلمون کو دہشت گرد قرار دیا جاچکا ہے اور ہزاروں اخوانی جیلوں میں بند کر دیے گئے ہیں۔