.

ایران پر پابندیوں کا نہیں سفارتکاری کو موقع دیا جائے، ہلیری کلنٹن

معاہدہ نہ ہوا تو ایران پر زیادہ سخت پابندیوں کا موقع ہو گا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

سابق امریکی وزیر خارجہ ہلیری کلنٹن نے ایران پر نئی پابندیوں کے خلاف آواز اٹھاتے ہوئے کہا ہے کہ '' یہ وقت ہے کہ سفارت کاری کو موقع دیا جائے۔'' ہلیری متوقع طور پر 2016 کے صدارتی انتخاب کیلیے امیدوار ہیں۔

ہلیری کلنٹن نے اس سلسلے میں ڈیموکریٹ سینیٹرکارل لیون کو ایک خط لکھا ہے۔ ان کا کہنا ہے کہ '' سنجیدہ مذاکرات چل رہے ہیں اس لیے ایک مستقل حل کیلیے ہمیں ہر ممکن کوشش کرنی چاہیے۔'' سینیٹر لیون نے یہ خط میڈیا کو جاری کر دیا ہے۔

امریکی سینیٹ کے ایک سو ارکان میں 59 سینیٹروں نے ایران کیخلاف پابندیوں کے بل کی غیر رسمی حمایت کر رکھی ہے۔ ان حمایت کرنے والوں میں براک اوباما کی حکمران جماعت کے 16 ڈیمو کریٹس بھی شامل ہیں۔

تاہم اب اس بل پر معاملہ رکا ہوا ہے کہ ڈیموکریٹ لیڈر کی طرف سے ووٹ کی اجازت مشکلہو گئی ہے۔ صدر اوباما نے سٹیٹ آف یونین سے اپنے سالانہ خطاب میں کہا تھا کہ وہ اس طرح کی کسی قانون سازی کو ویٹو کر دیں گے۔

ہلیری نے کہا '' انہیں صدر اوباما کی طرح زیادہ امید نہیں ہے، لیکن اس کے باوجود وہ سمجھتی ہیں کہ سفارت کاری کو موقع دینا بہتر ہو گا۔''

سابق وزیر خارجہ نے اپنے خط میں یہ بھی کہا ہے کہ اگر ایران کے ساتھ جوہری ایشو پر حتمی معاہدہ نہ ہوا تو پابندیاں لگانے کا یہ زیادہ اچھا موقع ہو گا اور عالمی حمایت بھی زیادہ ہو گی، جس سے پابندیوں کا نفاذ یقینی ہو گا۔