.

یمنی دارالحکومت مارٹر گولوں اور کاربم دھماکے سے لرز گیا

پیر کی صبح دہشت گردوں نے صنعا کے سفارتی زون کو نشانہ بنایا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

پیر کی صبح یمنی دارالحکومت میں قائم سفارتی زون مارٹر گولوں کی گولہ باری سے گونج اٹھا ۔ مبینہ طور پر ان فائر کیے جانے والے مارٹر گولوں کا رخ فرانس کے سفارت خانے کی طرف تھا۔

اسی دوران ایک کار بم دھماکہ بھی اس جگہ سے محض چند میٹر کے فاصلے پر ہوا ہے۔ جس سے سفارتی علاقہ لرز اٹھا ۔ سکیورٹی حکام کے مطابق مارٹر گولے فرانس کے سفارت خانے کی دیوار سے تیس میٹر کے فاصلے پر گرے ہیں۔

سکیورٹی حکام نے کار بم دھماکہ فرانس کے سفارت خانے اور سابق صدر علی عبداللہ صالح کی رہائش گاہ کے درمیانی عاقے میں ہوا ہے۔ واضح رہے سفارتی علاقے کو صنعا کے ضلع حادا میں شامل کیا گیا ہے۔

عینی شاہدین کے مطابق سابق صدر کی رہائش گاہ اور سفارت خانے کے درمیان ہونے والا کار بم دھماکہ ایک نصب کردہ دھماکہ خیز آلے سے کیا گیا ہے۔ یہ دھماکے وزارت دفاع کے نزدیک منی بسوں میں نصب شدہ دو بموں کے پھٹنے کے بعد ہوئے ہیں۔ واضح رہے دونوں بسیں ایک جگہ پارک کی گئی تھیں۔

فوری طور پر جانی نقصا ن کے بارے میں کوئی مصدقہ اطلاع سامنے نہیں آئی ہے۔ تاہم اس طرح کی متشدد کارروائیوں کی تعداد میں اضافہ ہو گیا ہے۔ عرب دنیا کے غریب ترین ملکوں میں سے یمن ایک عرب ملک ہے جو 2011 کے بعد مسلسل بد امنی کی زد میں ہے۔