صدر حسن روحانی قوم سے جھوٹ بولنا بند کر دیں: ایرانی عالم دین

'امریکی بے وفاء ہیں، ان کے وعدوں پر کوئی اعتبار نہیں'

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

ایران میں حکومت کے قریب سمجھے جانے والے ایک سرکردہ مذہبی رہ نما علامہ آیت اللہ مصباح یزدی نے اعتدال پسند صدر ڈاکٹر حسن روحانی کی پالیسیوں کو کڑی تنقید کا نشانہ بنایا ہے۔ ان کا کہنا ہے کہ صدر روحانی قوم سے "جھوٹ بول کر دھوکہ دے رہے ہیں"۔ میں علماء، اہم شخصیات اور شہداء کے ورثاء کو مشورہ دیتا ہوں کہ وہ امریکیوں کے دھوکے میں نہ آئیں۔

العربیہ ڈاٹ نیٹ کے مطابق "امام خمینی فاؤنڈیشن" کے سربرہ علامہ مصباح یزدی نے دینی مرکز "قُم" میں ایک تقریب سے خطاب کرتے ہوئے صدر روحانی کی جوہری پروگرام بارے عالمی برادری سے معاہدے کو کڑی تنقید کا نشانہ بنایا۔ علامہ یزدی نے صدر کے اس بیان پر سخت برہمی ظہار کی جس میں انہوں نے حال ہی میں ایرانی دانشوروں کے ساتھ گفتگو میں جوہری پروگرام پر معاہدے کا دفاع کیا تھا اور ڈیل کی مخالفت کرنے والوں کو "جاہلوں کا ٹولہ" قرار دیا تھا۔

فارسی نیوز ویب پورٹل "رسا" کے مطابق اگست 2013ء کو حسن روحانی کے صدر منتخب ہونے کے بعد کسی حکومتی عالم دین کی جانب سے اُنہیں پہلی مرتبہ اس شدت کے ساتھ تنقید کا نشانہ بنایا گیا ہے۔

قدامت پسند شیعہ مسلک کے ایک وفد سے گفتگو میں علامہ مصباح یزدی نے کہا کہ یہ لوگ [حسن روحانی اور اس کے ساتھی] تنقید برداشت کرنے کا حوصلہ رکھنے کا دعویٰ کرتے ہیں لیکن درحقیقت یہ تنقید کا ایک لفظ برداشت نہیں کرسکتے ہیں۔

خیال رہے کہ ایرانی شدت پسند تہران اور عالمی طاقتوں کے درمیان جوہری پروگرام پر ہوئے معاہدے کو ایران کی پسپائی سے تعبیر کر رہے ہیں۔ بعض سرکردہ شخصیات نے جوہری سمجھوتے کو ایران کی شکست قرار دیا ہے۔

ایرانی عالم دین نے حکومت اور صدر روحانی کو مشورہ دیا کہ وہ امریکیوں کے دھوکے کا شکار نہ ہوں۔ امریکی بے وفاء ہیں۔ وہ اپنے مفاد کے لیے ہم سے نرمی کرتے ہیں۔ وقت آنے پروہ اپنا ایک وعدہ بھی پورا نہیں کریں گے۔ میں اس لیے باربار کہتا ہوں کہ بے وفاء امریکیوں کے کسی دھوکے میں نہ آئیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں