لو آپ اپنے دام میں‌ صیّاد آگیا

فلسطینیوں کے خلاف استعمال ہونے والا اشک آور شیل اسرائیلی فوجیوں پر چل گیا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
4 منٹس read

مظلوم فلسطینی عوام اسرائیلی فوج کی منظم ریاستی دہشت گردی کے دوران سرکاری مشینری کے تباہ کن اسلحے کا سامنا تو آئے دن کرتے رہتے ہیں لیکن کبھی کبھار خود اسرائیلی فوجی بھی ایسے اسلحے کا اپنے ہاتھوں شکار ہوجاتے ہیں۔ تب انھیں ضرور اندازہ ہوتا ہو گا کہ جس اسلحے کو وہ فلسطینیوں کے خلاف بے دریغ استعمال کرتے ہیں، وہ کتنا تکلیف دہ ہو سکتا ہے۔

ایسے ہی ایک واقعے کی ویڈیو فوٹیج برطانوی اخبار"ڈیلی میل" اور"لائف لیک" ویب سائیٹس نے پوسٹ کی ہے، جس میں فوجی جیپ سے نکلتے ہی یہودی فوجیوں کے ہاتھوں میں آنسو گیس کا شیل 'غلطی' سے پھٹ پڑتا ہے۔ اس کے بعد چاروں فوجیوں کے ساتھ وہی کچھ ہوتا ہے جو اکثر و پیشتر فلسطینیوں کا مقدر ٹھہرتا ہے۔اسرائیلی فوجیوں کو اپنی غلطی کا احساس ہونے کے ساتھ یہ بھی سمجھ آ جاتا ہے کہ اشک آور گیس کے گولوں کی بارش سے نہتے فلسطینی مظاہرین پر کیا گذرتی ہوگی؟

العربیہ ڈاٹ نیٹ کے مطابق یہ ویڈیو فلسطینی صحافی اور فوٹوگرافرحمدی ابو رحمہ نے اپنے کیمرے میں محفوظ کی تھی۔ ویڈیو فوٹیج میں اسرائیلی فوجیوں کی ایک جیپ مغربی کنارے میں گشت کے دوران ایک جگہ آ کر رُکتی ہے۔ اس میں سے چار فوجی اہلکار برآمد ہوتے ہیں۔ ان چاروں نے گیس ماسک بھی پہن رکھے ہیں۔ اس دوران ایک کے ہاتھ میں موجود آنسو گیس کا شیل غلطی سے پھٹ پڑتا ہے۔ گیس کا زہریلا دھواں پھیلتے ہی یہودی فوجیوں کو اپنی لپیٹ میں لے لیتا ہے۔ وہ چاروں اوندھے منہ گرتے ہیں۔ گیس ماسک بھی انہیں تحفظ نہیں دلا پاتا۔ ان میں سے ایک کو مسلسل قے شروع ہو جاتی ہے، دوسرا 'سورما' سانس نہیں لے پا رہا اور تیسرا اٹھتا ہے لیکن حالت غیر ہونے پر گر پڑتا ہے۔

یہ سارا تکلیف دہ منظر ان اسرائیلی فوجیوں کو یہ احساس دلانے کے لیے کافی ہے کہ ان کے ہاتھوں بے دریغ طریقے سے استعمال ہونے والے ان آنسو گیس شیلوں کے نتیجے میں نہتے فلسطینی کس کرب سے گذرتے ہوں گے؟ مظلوم فلسطینیوں کو تو اس طرح کے حملوں کا روز مرہ کی بنیاد پر سامنا کرنا پڑتا ہے۔ کوئی دن ایسا نہیں گذرتا کہ اسرائیلی فوجی فلسطینی مظاہرین پر زہریلی اشک آور گیس کی شیلنگ نہ کرتے ہوں اوراس کے نتیجے میں دسیوں افراد زخمی نہ ہوتے ہوں۔

خیال رہے کہ اسرائیل کے ہاں فلسطینی مظاہرین کو منتشر کرنے کے لیے استعمال کیے جانے والے آنسو گیس میں مُہلک مواد استعمال کیا جاتا ہے۔ آنسوگیس کے شیلوں میں عموما گیس پیدا کرنے والے بھاری کثافت کے حامل ٹھوس اجزاء شامل کیے جاتے ہیں جو فائر کیے جانے کے ساتھ ہی گیس کے گولے میں تبدیل ہو جاتے ہیں۔ یہ زہریلا دھواں انسانوں سمیت تمام جانداروں کے لیے مہلک ثابت ہوسکتا ہے۔

گیس کا زہریلا دھوا قے اور کھانسی کے ساتھ پھیپھڑوں کی جلن کا باعث بن سکتا ہے جو نتیجۃً جان لیوا بھی ہو سکتا ہے۔ آنسو گیس کا دھواں آنکھوں کے لیے بھی زہرِ قاتل ہے۔ گیس کا گولہ قریب پھٹنے سے بینائی مستقل طور پر جا سکتی ہے۔ نیز آنسو گیس کے زہریلے دھوئیں سے ناک، گلے اور معدے میں سوزش کے ساتھ نظام تنفس کو نقصان پہنچنے کا بھی قوی اندیشہ ہوتا ہے کیونکہ زہریلی گیس کے نتیجے میں یہ سب متاثر ہوتے ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں