.

لبنان: صدر کے بارے میں ٹویٹ کرنے پر دو ماہ قید کی سزا

شہری نے ٹوئٹر پر وزیرداخلہ کے متعلق بھی جذبات کا اظہار کیا تھا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

لبنان میں ایک ویب دویلپر ملک کے صدر مائیکل سلیمان کی توہین کرنے پر دوماہ قید کی سزا سنا دی گئی ہے۔ سزا پانے والے شہری جین آسی پر الزام تھا کہ اس نے ٹوئٹر پیغام کے ذریعے صدر کی شان میں گستاخی کی تھی۔

عدالت کی طرف سے سنائی گئی اس سزا کے خلاف دس دنوں کے اندر اندر اپیل دائر کی جا سکتی ہے۔ اپیل دائر نہ ہونے کی صورت میں فوری طور پر جیل بھگتنا ہو گی۔

کسی لبنانی شہری کو سوشل میڈیا پر اپنے خیالات سامنے لانے کے جرم میں سزا دیے جانے کا یہ پہلا واقعہ ہے۔ اگرچہ اس سے پہلے بھی مختلف لوگوں پر اسی نوعیت کے الزامات کے تحت مقدمہ چل چکا ہے لیکن سزا سنائے جانے کا وااقعہ پہلا ہے۔

سزا پانے والے جین آسی کے مطابق اس نے مذکورہ ٹویٹ پیغام جنوری فروری 2013 کے دوران کیا تھا اور اس میں وزیر داخلہ کو بد تمیز وغیرہ اور صدر لبنان کو سیاسی اعتبار سے محنث ہیں۔

واضح رہے اس شہری کو ابھی گرفتار نہیں کیا گیا ہے البتہ وہ عدالتی فیصلے کیخلاف اپیل کی تیاری کر رہا ہے۔ اس کا کہنا ہے '' محض ایک ٹویٹ کی وجہ سے میں دو ماہ جیل میں نہیں گذار سکتا، نہ اسے یہ اجازت دے سکتا ہوں مجھے ایک ٹویٹ کی بنیاد پر جیل بھیجے اور ملکی مسائل کو حل کرنے کیلیے سرگرم نہ ہو۔''

جین آسی کے مطابق وہ سیاسی کارکن نہیں ہے لیکن حزب اللہ کے سربراہ حسن نصراللہ اور اس مسیحی اتحادی مائیکل عون کیلیے حمایت ضرور رکھتا ہے۔

اس عدالتی فیصلے کو انسانی حقوق کی تنظیموں نے بھی تنقید کا نشانہ بنایا ہے۔ ہیومن رائٹس واچ کے ڈپٹی ڈائریکٹر برائے شمالی افریقہ اور مشرق وسطی نے اس فیصلے کو منفی پیش رفت قرار دیا ہے۔