.

مصر میں اخوان نواز فیس بک پیج کا ایڈمن گرفتار

افواہیں اور مصری فوج کے خلاف اشتعال پھیلانے کا الزام

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

مصری وزارت داخلہ کے سوشل میڈیا پیج پر جاری کردہ بیان میں بتایا گیا ہے کہ قاہرہ انتظامیہ نے سوشل میڈیا کے ذریعے مصر میں فوجی بغاوت کے خلاف طنطی تحریک کے منتظم کو "اخوان المسلمون کا دہشت گرد" قرار دے کر حراست میں لے لیا ہے۔

اس پیج کے منتظم کو صرف نام کے پہلے الفاظ اور پیدائش کے سال ہی سے شناخت کروایا گیا ہے اور اس پر جھوٹی خبریں پھیلانے، سیکیورٹی فورسز کے خلاف اشتعال پھیلانے اور سیکیورٹی افسروں کی ذاتی معلومات کی تشہیر کرنے کا الزام لگایا گیا ہے۔

ایک مصری نیوز ویب سائٹ کے مطابق مصری فورسز نے مشتبہ شخص کے گھر سے کمپیوٹر اور ڈیٹا ڈرائیو قبضے میں لے کر تفتیش کا آغاز کردیا ہے۔

نیوز ویب سائٹ سے بات کرتے ہوئے قاہرہ یونیورسٹی میں انگریزی ادب کے پروفیسر وفا البنا کا کہنا تھا کہ سیکیورٹی فورسز انٹرنیٹ پر ہونے والی تمام سرگرمیوں پر نظر رکھنا چاہتے ہیں مگر وہ فیس بک پیجز اور سیاسی کارکنوں پر نظر رکھنے کے لئے ضروری صلاحیتوں سے عاری ہیں۔

فوجی بغاوت کے خلاف کام کرنے والے تحریک طنطہ کے فیس بک پیج نے فوجی حمایت سے کھڑی مصری حکومت پر الزام لگایا ہے کہ اس نے پچھلےسال جولائی میں محمد مرسی کی حکومت گرا دی تھی۔

طنطی تحریک کا فیس بک پیج اگست 2013 میں بنایا گیا تھا اور اس کو 10٫400 افراد نے لائیک کیا ہوا ہے۔