.

اسد رجیم خوراک، ادویہ کی محصورین تک رسائی میں رکاوٹ

شامی حکمران مختلف حیلوں بہانوں سے ترکی سے آنے والی امداد روک رکھی ہے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

شام کے محصور شہروں تک امدادی سرگرمیوں کی بحالی کے ایک روز بعد اسد رجیم نے محاصرہ زدہ شہریوں تک امدادی سامان کی رسائی دوبارہ روک دی ہے۔

العربیہ ٹی وی کے مطابق اقوام متحدہ کے مندوبین نے الزام عائد کیا ہے کہ شامی رجیم سیکیورٹی وجوہات اور دیگر حیلے بہانوں کا سہارا لیکر محصورین تک خوراک اور ادویہ کی رسائی میں دانستہ طورپر رکاوٹیں کھڑی کر رہی ہے۔ عالمی ادارے اور امدادی تنظیموں کا کہنا ہے کہ شامی کسٹم حکام نے ترکی کے راستے پہنچنے والے امدادی سامان کے ٹرک متاثرہ علاقوں تک پہنچنے سے روک دیے ہیں اور اس کی وجہ ہفتہ وار تعطیل بتائی جا رہی ہے۔

اقوام متحدہ کے ادارہ برائے بحالی پناہ گزین "یو ایچ سی آر" کی جانب سے جاری ایک بیان میں کہا گیا ہے کہ ترکی کے راستے خوراک، ادویہ اور کپڑوں پر مشتمل امدادی سامان کے 79 ٹرک شام کے شہر قامشلی روانہ کیے گئے تھے جن میں سے صرف آٹھ ٹرک اپنی منزل تک پہنچ پائے ہیں۔ باقی ابھی راستے میں جگہ جگہ روک لیے گئے ہیں۔

اقوام متحدہ کی جانب سے امدادی سرگرمیوں میں رکاوٹ کا یہ الزام ایک ایسے وقت میں سامنے آیا ہے جب سلامتی کونسل نے شامی حکومت اور باغیوں سے مطالبہ کیا ہے کہ وہ امدادی اداروں کو متاثرین تک رسائی اور امداد کی بلا تعطل فراہمی یقینی بنانے کا موقع فراہم کریں۔ عالمی ادارے کے ایک عہدیدار کا کہنا ہے کہ شامی حکومت سلامتی کونسل کے اس مطالبے کی پابندی نہیں کررہی ہے۔