.

تیونس : عسکری گروپ انصار الشرعیہ کے آٹھ ارکان گرفتار

عسکریت پسند بم بنا رہے تھے کہ دھماکہ ہو گیا، دو زخمی بھی گرفتار

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

تیونس پولیس نے ایک اسلام پسند عسکری گروپ سے وابستہ آٹھ افراد کو گرفتار کر لیا ہے۔ یہ گرفتاری ایک حادثاتی دھماکے کے بعد عمل میں لائی گئی ہے۔ اطلاعات کے مطابق عسکری گروپ تیونس کے ایک تجارتی شہر صفاقس میں دہشت گردی کیلیے بم تیار کر رہا تھا کہ اسی دوران دھماکہ ہو گیا۔

اس واقعے کے بعد گرفتار کیے گئے عسکریت پسندوں کا تعلق انصار الشرعیہ نامی گروپ کے ساتھ بتایا گیا ہے۔ وزارت داخلہ کے مطابق یہ آٹھوں افراد دارالحکومت سے 270 کلومیٹر دور صفاقس میں کارروائی کیلیے بم تیار کر رہے تھے۔ گرفتار کیے جانے والے دو ایسے عسکریت پسند بھی شامل ہیں جو دھماکہ خیز مواد کو بم سازی میں استعمال کرتے ہوئے زخمی ہیں۔

انصار الشرعیہ تیونس میں ایک دہشت گرد گروپ کے طور پر معروف ہے اور ملک کو مطلق العنان حکمران زین العابدین کی برطرفی کے بعد سے اسلامی ریاست بنانے کیلیے 2011 سے سرگرم ہے۔ دوسری جانب تیونس نے اسلامی عسکریت پسندوں کے خلاف کریک ڈاون شروع کر رکھا ہے تاکہ ملک کو مکمل جمہوری نظام دیا جا سکے۔

واضح رہے امریکی صدر اوباما نے بھی تیونس کی تعریف کی ہے۔ تیونس عرب دنیا کی انتہائی سیکولر ریاست کے طور پر جانا جاتا ہے۔ ان دنوں تیونس میں عبوری حکومت بروئے کار ہے۔ تقریبا ڈیڑھ سال کے احتجاج کے بعد منتخب حکومت اور اپوزیش جماعتوں نے عبوری حکومت پر اتفاق کیا تھا۔ تیونس کی پارلیمنٹ نے محض چند ہفتے پہلے ہی نیا آئین بھی منظور کیا ہے۔