.

حلب امدادی قافلوں کے باعث باغیوں کا حمص سے انخلا متاثر

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

شام میں جنگ سے متاثرہ حلب شہر کی بعض کالونیوں میں امدادی سامان کی فراہمی کے نتیجے میں حمص سے باغیوں کا انخلاء متاثر ہوا ہے۔

حکومت اور باغیوں کے درمیان رابطے کے لیے قائم کی گئی مذاکراتی کمیٹی کا کہنا ہے کہ حمص میں جنگجوؤں سے بھری سات بسیں سرکاری فوج کے قبضے میں ہیں۔ حلب اور دوسرے مقامات پر امدادی قافلوں کے نتیجے میں جیش الحر کے تیسرے دستے کو نکلنے کا موقع نہیں مل سکا۔

مُذاکراتی کمیٹی کے ایک سینیئر رکن نے بتایا کہ حلب کی النبل اور الزھراء کالونیوں میں فوری امداد کی فراہمی پر فریقین میں اتفاق ہوا تھا جس کے بعد سرکاری فوج کی نگرانی میں 12 ٹرکوں پر مشتمل امدادی قافلہ الزھراء اور النبل کالونیوں میں بھیجا گیا ہے، جبکہ شمالی حلب کے عندان شہر کو جانے والے امدادی قافلے کو روک لیا گیا ہے۔

شام میں باغیوں کی نمائندہ اسلامی محاذ کی سیاسی باڈی کی جانب سے کل جمعرات کو ایک بیان میں بتایا گیا تھا کہ حلب کی النبل اور الزھراء کالونیوں میں امداد کی فراہمی کو ہر صورت میں یقینی بنایا جائے گا۔ بیان میں کہا گیا تھا کہ امدادی کارروائیوں کا سلسلہ آج جمعہ کو بھی جاری ہے گا۔

خیال رہے کہ حال ہی میں شام میں جیش الحراور سرکاری فوج کے درمیان حلب کی دو بڑی کالونیوں میں امداد کی فراہمی کے لیے عارضی فائر بندی ہوئی تھی۔ النبل اور الزھراء کالونیوں میں اکثریت بشار الاسد کے حامیوں کی ہے تاہم باغیوں کے زیر اثر ہونے کے باعث وہاں پر امدادی سرگرمیاں معطل تھیں۔

معاہدے کے تحت سرکاری فوج حمص محصور کیے گئے علاقوں سے جیش الحر اور دیگر جنگجوؤں کو محفوظ راستہ دینے کی پابندی ہے۔ حمص سے باغیوں کو دو مراحل میں نکالا جا چکا ہے۔ اب بھی درجنوں جنگجو سرکاری فوج کی تحویل میں ہیں، جنہیں تیسرے مرحلے میں محفوظ مقامات پر منتقل کرنا ابھی باقی ہے۔