فلوجا پر بمباری سے سولہ ہلاک، 20 زخمی

نینوا میں بھی دو افراد کو گولی مار دی گئی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

عراق کے شہر فلوجا میں زبردست بمباری کے نتیجے میں ہفتے کے روز کم از کم سولہ افراد ہلاک ہو گئے ہیں۔ مقامی ہسپتال کے ذمہ دار ڈاکٹر احمد شامی نے اس بمباری کے نتیجے میں 20 زخمیوں کی ہسپتال امد کی بھی تصیق کی ہے۔

واضح رہے عراق کی سکیورٹی فورسز نے فلوجا کے نزدیکی علاقوں پر اپنا قبضہ بحال کرنے کیلیے آپریشن شروع کر رکھا ہے۔ ان علاقوں پر حکومت مخالف جنگجووں نے چار ماہ سے قبضہ کر رکھا ہے۔ تاہم اس نوعیت کا حملہ اس سے پہلے اس علاقے میں سامنے نہیں آیا ہے۔ اگرچہ عراقی فوج صوبہ انبار کا قبضہ واپس لینے کیلیے پورا سال کوشش کرتی رہی ہیں کہ عسکریت پسندوں سے علاقہ واپس لے سکیں۔

سکیورٹی فورسز کو اس چیز کا بھی اندازہ نہ تھا کہ انہیں ان علاقوں میں عسکریت پسندوں سے قبضہ چھڑانے کیلیے اس قدر مشکلات کا سامنا کرنا پڑے گا۔ ہفتے کے روز ہونے والی اس بمباری کے علاوہ صوبہ نینوا میں میں بھی دو افراد کو گولی مار کر ہلاک کر دیا گیا ہے۔ واضح رہے ایک سال کے دوران 3100 افراد صوبہ نینوا میں ہلاک ہو چکے ہیں۔

عراق میں 30 اپریل کو ہونے والے عام انتخابات کے بعد تشدد کی ایک نئی لہر شروع ہوئی ہے۔ عراقی حکومت اس لہر میں بیرونی ہاتھ دیکھتی ہے جیسا کہ شام کی خانہ جنگی بھی اس تشدد کو تیز کرنے کا ایک سبب قرار دیا جاتا ہے۔ تاہم تجزیہ کاروں اور سفارتکاروں کا کہنا ہے کہ اس تشدد کی وجہ سنی آبادی کے ساتھ جاری مظالم ہیں۔ ردعمل کے طور پر عراق کو بری صورت حال کا سامنا ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں