.

کینیڈین حزب اللہ کا کمانڈر شامی باغیوں سے لڑائی میں ہلاک

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

شام میں لبنان کی شیعہ ملیشیا حزب اللہ کا لبنانی نژاد کینیڈین کمانڈر باغیوں کے ساتھ لڑائی میں مارا گیا ہے۔وہ شامی صدر بشارالاسد کی وفادار فوج کے ساتھ مل کر باغیوں کے خلاف جنگ میں شریک تھا۔

سکیورٹی ذرائع کے مطابق کمانڈر فوزی ایوب شام کے جنوبی صوبے درعا کے قصبے نوا میں باغیوں کے ساتھ جھڑپ میں سوموار کو مارا گیا ہے اور اس کی موت کی اطلاع ایک روز بعد منظرعام پر آئی ہے۔وہ امریکا کے وفاقی تحقیقاتی ادارے ایف بی آئی کو اسرائیل میں بم حملے کی سازش کے الزام میں مطلوب تھا۔

اس کو سن 2000ء میں مغربی کنارے میں اسرائیلی سکیورٹی فورسز نے گرفتار کیا تھا۔وہ چار سال تک اسرائیلی جیلوں میں قید رہا تھا اور اس کی اسرائیل اور فلسطینی حکومت درمیان قیدیوں کے تبادلے کے سمجھوتے کے تحت رہائی ہوئی تھی۔وہ حزب اللہ کا ایک معروف رکن تھا اور اس کا لبنان کے جنوبی گاؤں عین قانا سے تعلق تھا۔

فوزی ایوب کے پاس کینیڈا کی شہریت بھی تھی اور وہ امریکا میں رہتا رہا تھا۔برطانیہ میں قائم شامی آبزرویٹری برائے انسانی حقوق نے بھی شام میں جاری لڑائی میں اس کی موت کی تصدیق کی ہے۔

واضح رہے کہ شام میں لبنانی حزب اللہ کے علاوہ ایران اور عراق سے تعلق رکھنے والے شیعہ جنگجو صدر بشارالاسد کی حمایت میں سنی باغیوں کے خلاف جنگ میں شریک ہیں۔بشارالاسد اہل تشیع کے علوی فرقے سے تعلق رکھتے ہیں اور ان کے خلاف مسلح بغاوت برپا کرنے والے باغیوں کا تعلق ملک کے اکثریتی مسلک اہل سنت سے ہے۔ان سنی باغیوں کی حمایت میں مسلم ممالک کے علاوہ یورپ سے تعلق رکھنے والے مسلم نوجوان شام کا رُخ کررہے ہِیں اور وہ وہاں القاعدہ سے وابستہ تنظیموں یا دوسرے جنگجو گروپوں میں شامل ہوکر شامی فوج کے خلاف برسر جنگ ہیں۔