.

البغدادی نے امریکا میں کارروائی کی دھمکی دی: کرنل کنگ

داعش کے سربراہ کی حراستی کیمپ سے رہائی پر افسوس ہے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

داعش کے سربراہ ابو بکر البغدادی نے امریکی فورسز کی گرفتاری سے رہائی پانے کے موقع پر 2009 میں امریکا کے متعلقہ حکام کو دھمکی دی تھی کہ وہ انہیں نیو یارک میں دیکھ لے گا۔

یہ انکشاف عراق کے حراستی کیمپ اور امریکی جیل کے ایک رکن نے روزنامہ'' بیسٹ '' کے ساتھ بات چیت کرتے ہوئے انکشاف کیا ہے۔ امریکی فوج کے کرنل کینتھ کنگ نے آئی ایس آئی ایس المعروف داعش کے لیڈر کا حوالہ دیتے ہوئے کہا '' میں تم لوگوں کو نیو یارک میں دیکھوں گا۔''

واضح رہے کرنل کنگ 2009 میں عراق کے بکا کا کمانڈنگ آفیسر تھا۔ کنگ کا کہنا ہے ''میں نے اس وقت البغدادی کے ان الفاظ کو دھمکی کے طور پر نہ لیا تھا، کیونکہ بہت سارے قیدی جانتے تھے جیل حکام کی بڑی تعداد نیو یارک سے تعلق رکھتی تھی۔''

اخبار کی رپورٹ کے مطابق کرنل کنگ کا کہنا ہے '' البغدادی کے ان ریمارکس کو ایک مذاق کے طور پر لیا گیا تھا، عمومی خیال یہی تھا کہ وہ اپنی رہائی کا منتظر ہے اور وہ اپنی رہائی کے بعد واپس جاکر اپنے کام کاج میں لگ جائے گا۔ ''

کرنل کنگ نے مزید کہا '' میں نے تصور بھی نہ کیا تھا کہ اتنے مختصر وقت میں میں ایسی خبریں دیکھوں گا کہ البغدادی داعش کا سربراہ ہے۔ واضح رہے یہ وہی داعش ہے جس نے حالیہ دنوں میں عراق کے کئی علاقوں پر قبضہ کر لیا ہے۔

امریکی حراستی مرکز کے سابق کمانڈ نگ آفیسر کے مطابق '' مجھے البغدادی کے امریکی جیل میں رہنے پر نہیں بلکہ حیرت اس بات پر ہوئی ہے کہ البغدادی داعش کا سربراہ بن گیا ہے، وہ ایک برا قیدی تھا لیکن اتنا برا نہیں تھاکہ داعش کا سربراہ بن جائے۔''

البغدادی حراستی کیمپ میں ہوتے ہوئے سب سے بڑے سنی انتہا پسند کے طور پر نہ تھا۔ تاہم کرنل کنگ کو افسوس ہے کہ البغدادی کو امریکی حراستی مرکز سے رہائی دے دی گئی۔