.

لبنان: رمضان کے باوجود کھلے کیفے پر گرینیڈ حملہ

مئیر نے دن کے وقت کیفے بند رکھنے کا حکم دیا تھا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

رمضان المبارک کے دوران دن کے وقت کھولے رکھے گئے ایک کیفے پر نامعلوم مسلح افراد نے گرینیڈ پھینک کر حملہ کر دیا۔ یہ گرینیڈ حملہ لبنان کے شہر طرابلس میں کیا گیا ہے۔

گرینیڈ حملے سے چار افراد زخمی ہو گئے جبکہ کیفے کو بھی جزوی طور پر نقصان پہنچا ہے۔ تفصیلات میں بتایا گیا ہے کہ دو مسلح مگر نامعلوم افراد ایک موٹر سائیکل پر آئے اور انہوں نے میکیا کیفے پر بم پھینک دیا۔

کیفے کے مالک نے روزہ نہ رکھنے والے اپنے گاہکوں کو سہولت دینے کے لیے روزوں کی پروا نہ کرتے ہوئے دن کو بھی کیفے کھلا رکھنے کا اہتمام کر رکھا تھا۔

ایک مقامی شہری نے اپنا نام ظاہر نہ کرنے پر بتایا یہ کیفے طرابلس کے ان کیفوں میں سے ایک ہے جو رمضان کے دوران بھی دن بھر کھلے رہتے ہیں۔ اس کیفے پر مختلف بیماریوں میں مبتلا لوگ آتے ہیں۔ جن میں شوگر، بلڈ پریشر، گردوں کے عارضے اور السر کے مریض ہوتے ہیں۔

مقامی شہری کے بقول ''اس واقعے نے انیس صد اسی کی دہائی کی یاد تازہ کر دی ہے جب طرابلس پر اسلامک یونیفکیشن موومنٹ کا کنٹرول تھا۔''

واضح رہے یہ حملہ بلدیہ کی طرف سے جاری کیے گئے اس بیان کے بعد سامنے آیا ہے جس میں طرابلس کے عوام سے کہا گیا تھا کہ وہ رمضان کا احترام کریں اور سرعام کھانے پینے سے گریز کریں۔

اس سلسلے میں شہر کے مئیر نادر غزال نے ہوٹلوں وغیرہ کے مالکان کو مخاطب کرتے ہوئے کہا تھا کہ رمضان کے تقدس کو پامال نہ کریں۔ لیکن شہر کے کچھ لوگوں نے اس پابندی کو اپنی آزادی اور حقوق میں خلل ڈالنے کی کوشش قرار دیا۔

تاہم مئیر نے احترام رمضان کے حوالے سے اپنے موقف کا دفاع کیا اور کہا کھے عام کھانے پینے کے مشاغل کی اجازت نہ ہو گی۔ خیال رہے طرابلس لبنان کا دوسرا بڑا شہر ہے۔