.

جنوبی لبنان سے اسرائیل پر ایک اور راکٹ حملہ

اسرائیل کی توپ خانے سے گولہ باری، کوئی جانی نقصان نہیں ہوا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

جمعہ کے روز سے لیکر آج پیر کی صبح تک جنوبی لبنان نے اسرائیل میں تیسرا راکٹ حملہ کیا گیا ہے۔ تاہم اسرائیلی پولیس نے فوری طور پر کسی نقصان کی تصدیق نہیں کی ہے۔

اسرائیلی فوجی ترجمان کے مطابق غزہ کے خلاف اسرائیلی جنگی کارروائی '' حفاظتی کنارہ'' کے آغاز کے بعد جنوبی لبنان کی طرف سے یہ تیسرا راکٹ حملہ ہے۔

فوجی ترجمان بریگیڈئیر جنرل موٹی الموذ کا مزید کہنا ہے کہ '' ہم ان حملوں پر حیران نہیں بلکہ ہمیں اندازہ تھا غزہ پر کارروائی کے بعد ہماری سرحدوں کو گرم کرنے کی کوشش کی جائے گی۔''

اسرائیل کے ترجمان کے مطابق '' ہم نے ایسے حملوں کا توڑ کرنے کی تیاری کر رکھی ہے، ہمیں اندازہ تھا یہ کارروائی دوسرے علاقوں کو بھی اپنی لپیٹ میں لے گی۔ ''

واضح رہے لبنان کے جنوبی حصے کی طرف سے کیے جانے والے ان تینوں راکٹ حملوں کے دوران اسرائیل کا کوئی بھی جانی نقصان رپورٹ نہیں کیا گیا ہے۔

لبنان کے قومی خبر رساں ادارے کے مطابق ان راکٹ حملوں سے اسرائیل کا مغربی گلیلی کا علاقہ نشانہ بنا ہے۔ جبکہ ایک راکٹ اسرائیلی سرحد کے کھلے علاقے میں گرا ہے۔

اس تازہ حملے کے جواب میں اسرائیلی فوج نے توپ خانے سے گولہ باری کی ہے۔ لبنان سے تعلق رکھنے والے عینی شاہدین کے مطابق لبنانی سرحد کے اندر اسرائیلی گولہ باری کی آوازیں سنی گئی ہیں۔

اس سے قبل جمعہ کے روز لبنانی سکیورٹی فورسز نے ایک شخص کو اسرائیل پر راکٹ فائر کرنے کے شبہے میں گرفتار کیا تھا۔ بتایا گیا ہے کہ اس کا ایک انتہا پسند گروپ سے تعلق ہے ۔ تاہم انتہا پسند گروپ کا نام نہیں بتایا گیا۔

دوسری جانب حماس نے جنوبی لبنان کی طرف سے اسرائیل پر فائر کیے گئے راکٹوں سے لاتعلقی ظاہر کی تھی۔ خیال رہے جنوبی لبنان شیعہ ملیشیا حزب اللہ کا مضبوط گڑھ ہے۔ حزب اللہ 2006 میں اسرائیل کے خلاف ایک لڑائی لڑ چکی ہے۔