بشارالاسد کی تیسری مدتِ صدارت کے لیے حلف برداری

شامی عوام بیرونی قوتوں کی مسلط کردہ ''گندی جنگ'' جیت رہے ہیں:تقریر

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

خانہ جنگی کا شکار شام کے صدر بشارالاسد نے سات سال کی تیسری مدتِ صدارت کے لیے عہدے کا حلف اٹھا لیا ہے۔اس موقع پر انھوں نے دعویٰ کیا ہے کہ شامی عوام بیرونی قوتوں کی مسلط کردہ ''گندی جنگ'' جیت رہے ہیں۔

شام کے سرکاری ٹیلی ویژن پر بدھ کو دمشق کے صدارتی محل سے بشارالاسد کی حلف برداری کی تقریب براہ راست نشر کی گئی ہے۔اس میں بشارالاسد قاسیون پہاڑی میں واقع عوامی محل میں آرہے ہیں۔اس موقع پر ایک بینڈ شام کا قومی ترانہ بجاتا ہے اور وہ گارڈ آف آنر کا معائنہ کرتے ہوئے ایک بڑے ہال میں پہنچ جاتے ہیں جو ارکان پارلیمان ،مسلم اور مسیحی زعماء سے بھرا ہوا ہوتا ہے۔

بشارالاسد قرآن مجید پر ہاتھ رکھتے ہوئے حلف اٹھاتے ہیں اور وہ ملک کے آئین کی پاسداری کے عزم کا اظہار کرتے ہیں۔ان کے حلف کے الفاظ یہ تھے:''میں اللہ کے روبرو ملک کے آئین ،اس کے قوانین اور جمہوری نظام کے تحفظ اورعوام کے مفادات اور ان کی آزادیوں کے تحفظ کا حلف اٹھاتا ہوں''۔

اس کے بعد شامی صدر نے مختصر تقریر کی۔اس میں انھوں نے شامی عوام کی صدارتی انتخاب میں ووٹ ڈالنے اور ان پر مسلط کردہ گندی جنگ کو شکست دینے پر تعریف کی۔

واضح رہے کہ بشارالاسد گذشتہ تین سال سے جاری اپنے خلاف مسلح عوامی بغاوت کو مغرب کی حمایت یافتہ سازش قرار دیتے چلے آرہے ہیں جس پر ان کے بہ قول دہشت گرد عمل درآمد کررہے ہیں اور یہ عرب بہاریہ تحریکوں سے متاثر کوئی مقبول عوامی بغاوت نہیں ہے۔

ملک میں جاری خانہ جنگی اور حزب اختلاف کے مطالبات کے باوجود بشارالاسد اقتدار چھوڑنے سے انکار کرچکے ہیں۔گذشتہ ماہ منعقدہ صدارتی انتخابات میں وہ واضح اکثریت سے سات سال کی تیسری مدت کے لیے صدر منتخب ہوگئے تھے لیکن شامی حزب اختلاف اور اس کے مغربی اتحادیوں نے ان انتخابات کو ڈھونگ قرار دے کر مسترد کردیا تھا۔

اسد حکومت نے صرف اپنے عمل داری والے علاقوں میں پولنگ کرائی تھی اور حزب اختلاف کی فورسز کے زیر قبضہ علاقوں میں پولنگ نہیں ہوئی تھی جس کی وجہ سے لاکھوں شامی اپنا حق رائے دہی استعمال نہیں کرسکے تھے۔یہ شام میں گذشتہ پچاس سال میں پہلے صدارتی انتخابات میں تھے جن میں ایک سے زیادہ امیدواروں نے حصہ لیا تھا اور بشارالاسد 88.7 فی صد ووٹ لے کر کامیاب ٹھہرے تھے۔

شام میں مارچ 2011ء سے جاری خانہ جنگی کے نتیجے میں ایک لاکھ ساٹھ ہزار سے زیادہ افراد ہلاک ہوچکے ہیں اور لاکھوں بے گھر ہوئے ہیں۔ان میں سے بیشتر پڑوسی ممالک میں پناہ گزین کیمپوں میں مہاجرت کی زندگی گزار رہے ہیں یا پھر اندرون ملک دربدر ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں