جنگ میں 'خاموشی' کے دوران فلسطینی نونہال شہید

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

جنگ بندی کے اعلان کے محض چند منٹ بعد ہی غزہ میں فلسطینی مہاجر کیمپ پر اسرائیلی بمباری کے نتیجے میں ایک بچہ شہید جبکہ 30 زخمی ہو گئے۔

خبر رساں ایجنسی 'اے ایف پی' کے مطابق غزہ ایمرجنسی سروسز کے ترجمان اشرف القدرہ نے بتایا ہے کہ غزہ کے شاطی مہاجر کیمپ میں ساحل سمندر پر واقع گھر پر بمباری میں ایک آٹھ سالہ بچی شہید ہو گئی ہے۔

عینی شاہدین کے مطابق یہ اسرائیلی فضائی حملہ تھا مگر اس پر صہیونی فوج نے اس پر کوئی موقف نہیں دیا۔ اسرائیلی فوج کے مطابق اس معاملے کی چھان بین کی جا رہی ہے۔

انسانی بنیادوں پر 'خاموشی'

یہ واقعہ اسرائیلی فوج کی جانب سے غزہ میں جنگ بندی کے اعلان کے کچھ ہی دیر بعد رونما ہوا اور اس کے بعد چار ہفتوں پر محیط تنازع میں شہید ہونے والے فلسطینیوں کی تعداد 1823 تک پہنچ گئی۔

یہ جنگ بندی بین الاقوامی وقت کے مطابق صبح سات سے لے کر دوپہر دو بجے تک قائم رہنا تھی۔ اسرائیلی فوج نے ایک بیان میں کہا ہے کہ یہ عارضی جنگ بندی معاہدہ مصری سرحد سے ملحقہ علاقوں کے علاوہ تمام علاقوں کارگر ہو گا۔ مصر اسرائیل سرحدی علاقے میں اسرائیلی فوجیوں اور فلسطینی جنگجوئوں کے درمیان جھڑپیں جاری ہیں۔

مقبوضہ مغربی کنارے اور غزہ میں اسرائیلی فوجی سرگرمیوں کے منتظم جنرل یوآف مردخائی نے ایک بیان میں خبردار کیا ہے کہ اگر معاہدہ توڑا گیا تو اسرائیلی فوج فلسطینی راکٹ حملے کے داغے جانے کی جگہ پر حملہ کیا جائے گا۔"

لیکن حماس نے اہالیاں غزہ کو بتا دیا ہے وہ اس جنگ بندی کی پیروی نہیں کرے گی اس لیے لوگ گھروں سے باہر نکلتے وقت انتہائی احتیاط برتیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں