.

خودکش حملے میں سعودی ڈاکٹر کی موت کی تصدیق

داعش کی وضاحت نے خود معما حل کر دیا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

حال ہی میں سعودی عرب کے ایک نوجوان ڈاکٹر فیصل بن شامان العنزی کی شدت پسند تنظیم دولت اسلامی عراق وشام "داعش" میں شمولیت کے بعد اس کی پر اسرار موت کے بارے میں ایک نئی بحث چل نکلی تھی۔

ڈاکٹر العنزی کی موت کے بارے میں تین متضاد خبریں آ رہی تھیں تاہم داعش نے ایک تازہ ویڈیو فوٹیج میں خود ہی معما حل کر دیا۔ فوٹیج میں دکھایا گیا ہے کہ ڈاکٹر فیصل العنزی کی موت گولی لگنے یا بمباری سے نہیں بلکہ خودکش حملے کے نتیجے میں ہوئی تھی۔

العربیہ ڈاٹ نیٹ کے مطابق "داعش" کی جانب سے جاری ایک ویڈیو فوٹیج میں بارود سے بھری ایک کار 11 جولائی کو کرکوک میں کرد فوج "البشمرکہ" کی ایک چوکی سے ٹکراتے دکھایا گیا ہے جس کے ساتھ ہی ایک زور دھماکا ہوا اور چوکی میں موجود کئی فوجی بھی مارے گئے۔ یہ خودکش حملہ داعش سے وابستہ ہونے والے نوجوان سعودی میڈیکل ڈاکٹر فیصل بن العنزی نے کیا تھا۔ یہی خودکش حملہ اس کی موت کا باعث بنا تھا۔

اس سے قبل یہ خبر آئی تھی کہ ڈاکٹر العنزی کی موت موصل میں عراقی فوج کے جنگی طیاروں کی بمباری سے ہوئی جبکہ ایک دوسری خبر بتایا گیا تھا کہ العنزی "داعش" کے ایک مرکز میں ہونے والیے دھماکے میں مارے گئے تھے۔