حماس کا تل ابیب میں غیرملکی پروازوں کو انتباہ

اسرائیلی فوج کے جارحانہ حملوں میں نو فلسطینی شہید

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
4 منٹس read

اسلامی تحریک مزاحمت (حماس) کے عسکری ونگ نے اسرائیلی فوج کی غزہ کی پٹی پر دوبارہ جارحیت کے آغاز کے بعد غیر ملکی فضائی کمپنیوں کو تل ابیب کے بن گورین ہوائی اڈے پر پروازوں پر کی آمدورفت پر انتباہ کیا ہے جبکہ صہیونی فوج کے حملوں میں نو فلسطینی شہید ہو گئے ہیں۔

حماس کے عسکری ونگ عزالدین القسام بریگیڈ کے ترجمان نے اس انتباہ سے قبل ایک بیان میں کہا ہے کہ اسرائیلی فوج تنظیم کے کمانڈر محمد ضیف کو ایک حملے میں نشانہ بنانے میں ناکام رہی ہے۔

ترجمان نے کہا کہ ''کمانڈر محمد ضیف المعروف ابو خالد غزہ میں اپنے گھر پر صہیونی حملے میں بال بال بچ گئے ہیں لیکن اس میں ان کا سات ماہ کا بیٹا اور اہلیہ شہید ہو گئے ہیں''۔

ترجمان نے مزید کہا کہ صہیونی دشمن کے قائدین اپنے دفاتر میں ٹی وی سکرینوں کے سامنے بیٹھ کر بڑی خبر کے منتظر تھے۔ ان کے سراغرساں اداروں نے بھی انھیں یہ یقین دلا دیا تھا کہ خوشی کا ایک بڑا لمحہ آنے والا ہے لیکن وہ اس بڑی خبر کو پانے میں ناکام رہے ہیں۔

حماس کے ملٹری کمانڈر کی اہلیہ اور کم سن بچے کی نماز جنازہ میں بعد میں ہزاروں فلسطینیوں نے شرکت کی ہے۔ قبل ازیں غزہ کی پٹی کے مختلف علاقوں میں اسرائیلی فوج کے حملوں میں سات فلسطینی شہید اور متعدد زخمی ہو گئے ہیں۔ ایمرجنسی سروسز کے ترجمان اشرف القدرہ نے بتایا ہے کہ غزہ شہر کے شمال میں صہیونی فوج کی بمباری میں ایک ادھیڑعمر شخص شہید ہو گیا ہے۔

ادھر غزہ کی پٹی کے قصبے دیرالبلاح میں اسرائیلی طیاروں کی بمباری میں ایک حاملہ خاتون سمیت ایک ہی خاندان کے چھے افراد شہید ہوئے ہیں۔ ان میں بتیس سالہ خاتون رفعت علوح کے تین کم سن بچے،ایک بھائی اور ایک رشتے دار خاتون شامل ہے۔

درایں اثناء اسرائیلی وزیر داخلہ جدعون ساعر نے غزہ حماس کے کمانڈر پر فضائی حملے کا دفاع کرتے ہوئے کہا ہے کہ ''ضیف ہی اس کا ہدف تھے۔ وہ اسامہ بن لادن کی طرح موت کے حق دار ہیں۔ اگر ہمیں پھر موقع ملا تو ہم انھیں نشانہ بنانے کی کوشش کریں گے''۔

اسرائیلی فوج کے غزہ پر حملے کے ردعمل میں حماس نے بن گورین ائیرپورٹ پر حملے کی دھمکی دی ہے اور بین الاقوامی فضائی کمپنیوں کو خبردار کیا ہے کہ وہ اس پر پروازوں کی آمد ورفت سے گریز کریں۔

حماس کے ایک عسکری کمانڈر نے اپنے بیان میں کہا کہ ''ان کی جماعت نے اسرائیلی جارحیت کے ردعمل میں ہوائی اڈے کو نشانہ بنانے کا فیصلہ کیا ہے''۔اسرائیلی فوج نے منگل کی رات عارضی جنگ بندی ختم ہونے سے قبل ہی غزہ کی پٹی پر دوبارہ فضائی حملے شروع کردیے تھے۔ان حملوں کے بعد حماس کے عسکری ونگ نے قاہرہ میں مصر کی ثالثی میں جاری بالواسطہ مذاکرات میں شریک فلسطینی وفد کو واپس بلا لیا ہے۔

مصر نے اسرائیل اور فلسطینیوں پر زوردیا ہے کہ وہ کشیدگی کے خاتمے کے لیے مذاکرات کا سلسلہ دوبارہ شروع کریں۔اس نے غزہ کی پٹی میں جنگ بندی کی خلاف ورزی پر گہرے افسوس کا اظہار کیا ہے۔

عرب لیگ کے سیکریٹری جنرل نبیل العربی نے اسرائیل پر غزہ میں جاری تنازعے کے خاتمے کے لیے تمام کوششوں کو سبوتاژ کرنے کا الزام عاید کیا ہے۔انھوں نے بدھ کو صحافیوں سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ اسرائیل غزہ کی پٹی میں امن کے لیے کسی بھی قسم کے سمجھوتے کی راہ میں حائل ہوتا رہا ہے۔

انھوں نے کہا کہ عرب لیگ غزہ میں حماس اور اسرائیل کے درمیان جلد سے جلد مستقل جنگ بندی کی خواہاں ہے۔ نبیل العربی قاہرہ میں اس نیوزکانفرنس کے بعد جنیوا روانہ ہو گئے ہیں جہاں وہ بین الاقوامی ریڈ کراس کمیٹی کے ساتھ فلسطینیوں کے تحفظ سے متعلق امور پر تبادلہ خیال کریں گے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں