غزہ پر اسرائیلی بمباری جاری، دو مزید فلسطینی شہید

مصر نے راہداری کھولنے کی پیشکش کردی، حماس کا خیر مقدم

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

اسرائیل کے غزہ پر منگل کے روز صبح سویرے کیے گئے حملے کے دوران دو فلسطینی شہید ہو گئے ہیں۔ ان دو تازہ شہادتوں سے آٹھ جولائی سے اب تک شہید ہونے والے فلسطینیوں کی مجموعی تعداد 2136 ہو گئی ہے۔

اسرائیلی فوجی ترجمان کے مطابق پیر کی رات نو بجے سے منگل کی صبح تک اسرائیل نے مجموعی طور پرغزہ پر پندرہ حملے کیے ہیں۔ یہ بھی بتایا گیا ہے کہ منگل کی صبح حماس کی طرف سے بھی اسرائیل پر متعدد راکٹ داغے گئے، ان راکٹوں کو اسرائیل کے دفاعی میزائل سسٹم آئرن ڈوم کے تحت روک دیا گیا ہے۔

حماس کے عسکری شعبے عزالدین القسام بریگیڈ نے منگل کی صبح جاری کیے گئے ایک بیان میں کہا گیا ہے کہ القسام بریگیڈ نے ایک راکٹ حیفہ کے علاقے میں جبکہ چار راکٹ تل ابیب کے علاقے میں داغے ہیں۔ ان راکٹوں کے ذریعے 14 اور 16 منزلہ عمارتوں کو نشانہ بنانے کی کوشش کی گئی۔

دریں اثناء اسرائیل پر دو راکٹ لبنان کی طرف سے بھی فائر کیے جانے کی اطلاع پیر کو رات گئے سامنے آئی ہے۔ واضح رہے اس سے پہلے اسرائیل نے صرف ایک حملے کا حوالہ دیا تھا۔

دوسری جانب مصری مذاکرات کاروں نے پیر کی صبح سے ایک نئی جنگ بندی کی تجویز دی تھی۔ مصری ذرائع کے حوالے سے جنگ بندی کی صورت میں غزہ سے منسلک راہداری کھولی جاسکتی ہے تاکہ غزہ پر اسرائیلی بمباری سے تباہ ہونے والی عمارتوں کی تعمیر نو کے لیے سامان منتقل ہو سکے۔

مصری حکام کے مطابق اس سلسلے میں فلسطینی حکام اور اسرائیل سے بھی رابطہ ہو چکا ہے۔ علاوہ ازیں مختصر دورانیہ کی جنگ بندی کے لیے بھی ایک تجویز زیر غور ہے۔

فلسطینی عہدیدار نے اپنا نام ظاہر نہ کرنے کی شرط پر بتایا کہ انہوں نے اس مصری تجویز کو مثبت انداز سے دیکھا ہے تاہم انہیں اس تجویز پر اسرائیل کے ردعمل کا انتظار ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں