دیالا مسجد قتل عام میں ملوث مشتبہ دہشت گرد گرفتار

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

عراق شہر دیالا کے گورنر عامر المجمعی نے دعویٰ کیا ہے کہ گذشتہ جمعہ کے روز جامع مسجد مصعب بن عمیر میں گھس کر نمازیوں کے وحشیانہ قتل عام میں ملوث تین مشتبہ دہشت گردوں کو حراست میں لے لیا گیا ہے۔

السامریہ نیوز کے مطابق کے مطابق گورنر دیالا کا کہنا ہے کہ مسجد مصعب بن عمیر پر حملے میں ملوث عناصر ضلع بھر میں دہشت گردی کی کارروائیوں میں ملوث ہونے کے ساتھ ساتھ فرقہ واریت کو ہوا دینے کی سازشوں کے بھی مرتکب پإئے گئے ہیں۔

العربیہ ڈاٹ نیٹ کے مطابق گورنر المجمعی کے دفتر سے جاری ایک بیان میں ان کا کہنا ہے کہ پولیس نے زرکوش قبیلے کے تین دہشت گردوں کو حراست میں لیا ہے۔ ان کی شناخت منیر مزھر حاجم سلطان الزرکوشی، صدام مزھرم حاجم سلطان الزکوشی اور سالم مزھر حاجم سلطان الزرکوشی کے ناموں سے کی گئی ہے۔ مسجد مصعب بن عمیر میں گذشتہ جمعہ کے روز نمازیوں کے بہیمانہ قتل میں ان تینوں دہشت گردوں کا ہاتھ تھا۔

انہوں نے مزید کہا کہ پکڑے گئے دہشت گرد ملک میں افراتفری پھیلانے، فرقہ واریت کو ہوا دینے اور قبائل کو باہم دست وگریباں کرنے کی گھنائونی اور ملک دشمن سازشوں میں‌ ملوث تھے۔ ضلع دیالا ان کا خاص ہدف تھا۔

پولیس اور سیکیورٹی اداروں پر مشتمل ایک کمیٹی تشکیل دے دی گئی ہے جو پکڑے گئے مشتبہ افراد سے پوچھ گچھ کے بعد مزید دہشت گردوں کی تلاش کے لیے بھی کام کرے گی تاکہ جامع مسجد میں نماز جمعہ کے دوران دہشت گردی کے مرتکب تمام عناصر کو کیفر کردار تک پہنچایا جا سکے۔ انہوں نے کہا کہ ضلع دیالا میں امن وامان کےقیام کے لیے بھی کوششیں تیز کر دی گئی ہیں تاکہ آئندہ مسجد میں قتل عام جیسے واقعات کی روک تھام کی جا سکے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں