.

عراق : الانبار کے گورنر مارٹر حملے میں زخمی

امریکی فوج کی عراقی حکومت کی درخواست پرداعش کے ٹھکانوں پر بمباری

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

عراق کے مغربی صوبہ الانبار کے گورنر احمد الدلیمی ایک مارٹر گولے کے حملے میں شدید زخمی ہوگئے ہیں جبکہ امریکی فوج نے عراق کی درخواست پر اسی صوبے میں دولت اسلامی عراق وشام ( داعش) کے ٹھکانوں پر بمباری کی ہے۔


عراقی حکام کے مطابق سکیورٹی فورسز نے اتوار کو صوبہ الانبار کے ایک قصبے بروانہ پر قبضہ کر لیا ہے اور وہاں سے داعش کے جنگجوؤں کو شکست دینے کے بعد پسپا کردیا ہے۔عراقی فورسز کے قبضے کے بعد اس قصبے میں ایک راکٹ گرا ہے جس کے نتیجے میں احمد الدلیمی کے سر میں شدید زخم آئے ہیں۔اس حملے میں سات فوجی بھی زخمی ہوگئے ہیں۔

درایں اثناء امریکی فوج نے دریائے فرات پر واقع حدیثہ ڈیم پر حملہ کیا ہے۔امریکا کی مرکزی کمان نے ایک بیان میں کہا ہے کہ ''حکومتِ عراق کی درخواست پر امریکی مسلح افواج نے صوبہ الانبار میں حدیثہ کے نزدیک واقع ڈیم کے دفاع کے لیے داعش کے دہشت گردوں کے ٹھکانوں پر حملہ کیا ہے''۔

پینٹاگان کے ترجمان رئیر ایڈمرل جان کربی نے ایک بیان میں کہا ہے کہ ''ہم نے حملے دہشت گردوں کو ڈیم کی سکیورٹی کے لیے خطرہ بننے سے روکنے کے لیے کیے ہیں۔اس ڈیم پر سنی قبائل کی مدد سے عراقی سکیورٹی فورسز کا کنٹرول ہے۔اگر یہ حملے نہیں کیے جاتے تو اس ڈیم پر داعش کا کنٹرول ہوجاتا اور اس سے بغداد میں موجود امریکیوں سمیت ہزاروں عراقیوں کی زندگیاں خطرے سے دوچار ہوسکتی تھیں''۔

شمالی عراق میں امریکی فوج 8 اگست سے داعش کے جنگجوؤں کے ٹھکانوں پر فضائی حملے کررہی ہے لیکن یہ حملے کرد سکیورٹی فورسز کی حمایت میں کیے جارہے تھے اور یہ پہلا موقع ہے کہ الانبار میں داعش کے جنگجوؤں کو بمباری میں نشانہ بنایا گیا ہے۔