.

اسرائیل نے مقبوضہ گولان میں شامی لڑاکا جہاز مار گرایا

سنہ 1982ء کے بعد اپنی نوعیت کا پہلا واقعہ ہے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

اسرائیلی فوج نے مقبوضہ وادی گولان کے علاقے میں شام کے ایک جنگی طیارے کو مار گرانے کا دعویٰ کیا ہے۔ جون سنہ 1982ء کے بعد اسرائیلی فوج کی جانب سے کسی شامی طیارے کو مار گرانے کا یہ پہلا واقعہ ہے۔

اسرائیل کے سرکاری ٹی وی نے اپنی رپورٹ میں بتایا ہے کہ اسرائیلی فضائیہ نے وادی گولان کی فضائی حدود میں پرواز کرنے والے ایک شامی لڑاکا جہاز کو مار گرایا ہے۔

العربیہ کے نامہ نگار کے مطابق اسرائیلی فضائیہ کی کارروائی میں گرایا گیا جنگی طیارہ روسی ساختہ "سوخوی 24" تھا جسے سرکاری فوج سرحدی علاقے القنیطرہ اور دیگر مقامات پر باغیوں کے ٹھکانوں‌پر بمباری کے لیے استعمال کر رہی تھی۔ اسرائیلی فوج نے ایک فوجی اڈے سے پیٹریاٹ میزائل کے ذریعےشامی طیارہ تباہ کیا۔

مبصرین شام کے جنگی طیاروں کی اسرائیلی فضائی حدود میں داخلے کو شک کی نگاہ سے دیکھتے ہیں۔ شام کی جانب سے اسرائیل کی فضائی حدود کی خلاف ورزیاں ایک ایسے وقت میں ہو رہی ہیں جب عالمی برادری امریکا کی قیادت میں داعش کے خلاف بھرپور جنگ کی تیاری کر رہی ہے۔