.

شام،لبنان سرحد پر جھڑپ ،حزب اللہ کے دو جنگجو ہلاک

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

لبنان کی شیعہ ملیشیا حزب اللہ نے شام کے ساتھ واقع سرحدی علاقے میں مسلح حملہ آوروں کے ساتھ جھڑپ میں اپنے دو جنگجوؤں کی ہلاکت کی اطلاع دی ہے۔

حزب اللہ کے ایک عہدے دار نے اپنی شناخت ظاہر نہ کرنے کی شرط پر بتایا ہے کہ جھڑپ لبنان کے ساتھ واقع شام کے سرحدی علاقے میں ہوئی ہے لیکن برسرزمین حزب اللہ کے ایک ذریعے اور مقامی لوگوں کا کہنا ہے کہ لبنان کے سرحدی قصبے نبی سبط کے باہر جھڑپ ہوئی ہے۔وہاں شام سے آنے والے مسلح جنگجوؤں نے حزب اللہ کی چوکیوں پر حملہ کیا تھا۔

حزب اللہ کے اس ذریعے کا کہنا ہے کہ شام کے علاقے قلمون سے آنے والے مسلح گروپوں نے بعلبک کے مشرق میں واقع نبی سبط کے نواح میں ان کی چوکیوں پر حملہ کیا تھا۔اس کے ردعمل میں حزب اللہ کے جنگجوؤں نے جوابی فائرنگ کی ہے جس کے نتیجے میں حملہ آوروں کا بھاری جانی نقصان ہوا ہے۔

لبنان کی سرکاری نیوز ایجنسی این این اے نے بھی اس لڑائی کی اطلاع دی ہے۔نبی سبط کے مکینوں کا کہنا ہے کہ انھوں نے حزب اللہ کے جنگجوؤں کو پک اپ ٹرکوں پراپنے زخمیوں کو لے جاتے ہوئے دیکھا ہے۔

واضح رہے کہ لبنان اور شام کے درمیان سرحد سرکاری طور پر متعین نہیں ہے۔اس پر حزب اللہ کے جنگجوؤں نے جگہ جگہ اپنی چوکیاں قائم کررکھی ہیں اور ان کے ساتھ ساتھ بعض مقامات پر مقامی لوگ اور اسمگلر بھی سرحد پر پہرے دے رہے ہیں۔

لبنان کے سرحدی علاقے میں یہ جھڑپ مشرقی قصبے عرسال میں شام میں برسرپیکار دولت اسلامی اور القاعدہ سے وابستہ النصرۃ محاذ کے جنگجوؤں کے لبنانی سکیورٹی فورسز پر حملے کے دو ہفتے کے بعد ہوئی ہے۔ جہادیوں نے کئی روز تک اس کے بعض حصوں پر قبضہ کیے رکھا تھا اور وہ مقامی لوگوں کی مداخلت کے بعد وہاں سے انخلاء پر آمادہ ہوئے تھے لیکن جاتے ہوئے تیس لبنانی فوجیوں اور پولیس اہلکاروں کو بھی یرغمال بنا کر لے گئے تھے۔انھوں نے ان میں سے تین کو ہلاک کردیا ہے۔

شام سے جہادیوں کے لبنان کے سرحدی علاقوں میں دراندازیوں پر تشویش پائی جارہی ہے جبکہ داعش اور دوسرے گروپوں کے جہادیوں کی اس طرح کی کارروائیوں کو شیعہ ملیشیا کی شامی صدر بشارالاسد کی حمایت میں لڑنے کا ردعمل قراردیا جارہا ہے۔حزب اللہ کے سیکڑوں جنگجو اس وقت شامی فوج کے ساتھ مل کر باغیوں کے خلاف لڑرہے ہیں۔