.

اسد رجیم، داعش دونوں یکساں دہشت گرد ہیں: فرانس، ترکی

شام کو نوفلائی زون قرار دیا جائے: ایردوآن

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

فرانس اور ترکی نے شام میں سرگرم تنظیم دولت اسلامی"داعش" اور صدر بشارالاسد دونوں کو یکساں دہشت گرد قرار دیتے ہوئے ان دونوں کے خلاف برسرجنگ معتدل شامی اپوزیشن کی ہرممکن مدد پر زور دیا ہے۔

العربیہ ڈاٹ نیٹ کے مطابق فرانسیسی وزیرخارجہ لوران فابیوس نے اپنے ترک ہم منصب مولود جاویش اوگلو سے پیرس میں ملاقات کے بعد ایک مشترکہ نیوز کانفرنس سے خطاب میں کہا کہ "داعش" اور اسد رجیم ایک ہی سکے کے دو رخ ہیں۔ دونوں انتہا پسند اور دہشت گرد ہیں اور دونوں کے ساتھ ایک ہی جیسا سلوک کیا جانا چاہیے۔ انہوں‌ نے شام کی اعتدال پسند اپوزیشن قوتوں کے ہاتھ مضبوط کرنے اور ان سے ہرممکن تعاون کرنے کی ضرورت پر بھی زور دیا۔

فرانسیسی وزیرخارجہ نے کہا کہ داعش کو یورپی ملکوں‌سے ملنے والی امداد کی روک تھام کے لیے ترکی اور فرانس انٹیلی جنس کے شعبے میں ایک دوسرے سے مزید تعاون کریں گے تاکہ داعشی دہشت گردوں‌ کو یورپ اور فرانس سمیت کسی بھی ملک سے کسی قسم کی امداد نہ مل سکے۔

مسٹر فابیوس کا کہنا تھا کہ پیرس شام میں سرگرم دہشت گرد گروپوں کی سرکوبی کے لیے عالمی اتحادی فوج کے ساتھ مل کر حملے جاری رکھے گا۔ انہوں‌ نے کہا کہ ترکی کی سرحد سے متصل کرد اکثریتی علاقے کوبانی کی صورت حال پر خاموش رہنے کا کوئی جواز نہیں ہے۔ ہم داعش کو کوبانی میں کھل کھیلنے کی اجازت نہیں دیں گے۔

نیوز کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے ترک وزیرخارجہ مولود جاویش اوگلو نے بھی داعش اور شام میں صدر بشارالاسد کے خلاف جنگی کارروائیوں کی حمایت کی۔ قبل ازیں انہوں‌ نے فرانسیسی حکام سے ملاقات میں ترکی کے یورپی یونین کے اقتصادی معاہدے میں‌ شمولیت کے حوالے سے بات چیت کی تھی۔ مشترکہ نیوز کانفرنس میں انہوں‌ نے کہا کہ داعش کے خلاف عالمی اتحادی فوج کے فضائی حملے کافی نہیں ہیں۔ جنگ میں شامل تمام ممالک کو داعش کے خطرے کے مستقل سدباب کے لیے موثر اور مشترکہ حکمت عملی وضع کرنا ہو گی۔ انہوں‌ نے کہا کہ شام میں اسد رجیم داعش سے زیادہ خطرناک ہے اور ترکی شام میں پرامن سیاسی انتقال اقتدار کے لیے ہرممکن کوشش جاری رکھے گا۔

بشارالاسد جنگی مجرم، دہشتگرد

درایں اثناء ترک صدر رجب طیب ایردوآن نے کل جمعہ کو اپنے ایک بیان میں کہا کہ شام کے سرحدی علاقے "کوبانی" کا محاصرہ کرنے والی تنظیم "داعش" کی طرح صدر بشارالاسد بھی دہشت گرد اور جنگی مجرم ہے۔ طرابزون شہر میں اپنے حامیوں کے ایک جلسے سے خطاب کرتے ہوئے صدر ایردوآن نے کہا کہ بشارالاسد اور ان کے حامی اپنے ملک میں منظم ریاستی دہشت گردی کے مرتکب ہو رہے ہیں جس کے نتیجے میں لاکھوں افراد اپنے گھر بار چھوڑنے پر مجبور ہیں۔ انہوں‌نے کہا کہ ترکی شام سے آنے والے پناہ گزینوں کی ہرممکن مددکرے گا اور انہیں صدر اسد کے رحم و کرم پر نہیں چھوڑا جائے گا۔

انہوں نے کہا کہ ہمارا اصول واضح ہے۔ ہم دہشت گردی کے مرتکب عناصر میں‌ کوئی فرق نہیں کرتے۔ ہمارے نزدیک دہشت گردی میں داعش اور اسد رجیم دونوں ایک ہی جیسے ہیں۔ دونوں انسانیت کے خلاف جرائم میں ملوث ہیں۔ ترک صدر نے شام کو نو فلائی زون قرار دینے کا مطالبہ کرتے ہوئے عالمی برادری پر زور دیا کہ وہ شامی پناہ گزینوں اور صدر اسد کے خلاف برسرجنگ باغیوں کی ہرممکن مدد کریں۔