.

شام: پانچ جوہری سائنسدان دوران سفر ہلاک

واقعہ برازیخ کے نزدیک پیش آیا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

شام میں انسانی حقوق کے حوالے سے سرگرم کارکنوں کے ذرائع نے انکشاف کیا ہے کہ نامعلوم مسلح افراد نے پانچ جوہری انجنئیروں کو قتل کر دیا ہے۔

ان جوہری توانائی کے شعبے کے 5 انجنئیروں کو اس وقت ہدف بنایا گیا جب یہ شام کے دارالحکومت دمشق کے شمال میں ایک بس پر سفر کر رہے تھے۔ بتایا گیا ہے کہ پانچوں انجنئیر برازیخ کے نزدیک ایک سائنسی تحقیق کے مرکز سے منسلک تھے۔

شام میں انسانی حقوق کی مانیٹرنگ کے لیے قائم آبزرویٹری کے ڈائریکٹر رامی عبدالرحمان نے یہ بات ایک عالمی خبر رساں ادارے کو بتائی ہے۔

واضح رہے یہ آبزرویٹری لندن میں قائم ہے اور شام کے حالات پر گہری نظر رکھتی ہے۔ اس آبزر ویٹری کے وابستہ کارکن اور رپوٹرر پورے شام میں پھیلے ہوئے ہیں۔

ابتدائی طور پر آبزرویٹری نے یہ نہیں بتایا کہ ان ہلاک کیے گئے پانچ جوہری سائنسدانوں کا کس ملک سے تعلق ہے۔ رامی عبدالرحمان کے مطابق ابھی یہ بھی واضح نہیں ہو سکا کہ جس بس پر یہ جوہری سائنسدان سفر کر رہے تھے، اس بس کو بم سے اڑایا گیا ہے یا اس بس کو فائرنگ کا نشانہ بنایا گیا ہے۔

پچھلے سال ماہ جولائی میں بھی اسی مرکز میں کام کرنے والے چھ افراد کو ایک مارٹر حملے میں ہلاک کر دیا گیا تھا۔ مئی 2013 میں دمشق کے نزدیک سائنسی تحقیق کے ایک مرکز پر اسرائیل نے بھی حملہ کیا تھا۔