عراقی فورسز کا بیجی پر دوبارہ کنٹرول

داعش کے جنگجو دوہفتے کی لڑائی کے بعد پسپا ہوگئے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
1 منٹ read

عراق کی سکیورٹی فورسز نے داعش کے ساتھ دو ہفتے کی شدید لڑائی کے بعد شمالی قصبے بیجی کا دوبارہ کنٹرول حاصل کر لیا ہے اور داعش کے جنگجو وہاں سے پسپا ہوگئے ہیں۔

عراقی کے سرکاری ٹی وی نے فوج کے کمانڈر جنرل عبدالوہاب السعدی کے حوالے سے جمعہ کو ''بیجی کی آزادی'' کی خبر دی ہے۔رائٹرز نے عینی شاہدین کے حوالے سے بتایا ہے کہ سکیورٹی فورسز نے ریفائنری کے نزدیک واقع پل کو عبور کر لیا ہے۔

بیجی عراق کے دوسرے بڑے شہر موصل اور شمالی شہر تکریت کے درمیان مرکزی شاہراہ پر واقع ہے۔اس قصبے پر عراقی فورسز کے دوبارہ کنٹرول کے بعد تکریت پر قابض داعش کے جنگجو کٹ کر رہ گئے ہیں اور انھیں اپنے دارالحکومت موصل کی جانب سے اب کمک نہیں مل سکے گی۔

داعش کے جنگجوؤں نے بغداد سے دوسو کلومیٹر شمال میں واقع بیجی اور اس کے نواح میں عراق کے تیل صاف کرنے کے بڑے کارخانے پر جون میں قبضہ کر لیا تھا۔انھوں نے شمالی شہر موصل سے یلغار کا آغاز کیا تھا اور پھر وہاں سے وہ جنوب اور جنوب مغرب کی جانب بڑھتے چلے گئے تھے۔ داعش کے شمالی شہروں پر قبضے کے بعد وہاں سے ہزاروں عراقی فوجی اپنا اسلحہ ،فوجی سازوسامان اور وردیاں تک چھوڑ کر بھاگ گئے تھے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں