.

عراقی فورسز تکریت کو داعش سے آزاد کرانے کے لیے تیار

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

عراق کی سیکیورٹی فورسز نے ملک کے شمال میں واقع صلاح الدین گورنری کے مرکزی شہر تکریت کو دولت اسلامی"داعش" کے قبضے سے چھڑانے کے لیے آپریشن کی تیاریاں مکمل کر لی ہیں۔

العربیہ نیوز چینل کی رپورٹ کے مطابق یہ آپریشن ایک ایسے وقت میں شروع کیا جا رہا ہے جب حالیہ دنوں کے دوران عراقی فورسز نے علاقے کی سب سے بڑی بیجی آئل ریفائری اور اس کے اطراف میں علاقے داعش سے دوبارہ واپس لے لیں ہیں۔

عراقی سیکیورٹی فورسز کے ایک ذریعے نے بتایا کہ تکریت کو چھڑانے کے لیے فوج نے تین اطراف سے شہر پر حملے کا منصوبہ تیار کیا ہے۔ داعش پر حملوں کے لیے فوجی کمک اکٹھی کی جا رہی ہے، اگلے چند ایام میں آپریشن کا باضابطہ آغاز کر دیا جائے گا۔‌

خیال رہے کہ شمالی عراق میں داعشی جنگجوئوں نے گذشتہ اگست میں تکریت سمیت کئی دوسرے بڑے شہروں پر قبضہ کر کے عراقی فوج کو مار بھگایا تھا۔ اب بھی موصل اور تکریت سمیت شمالی عراق کے کئی دوسرے شہر عسکریت پسندوں کے قبضے میں ہیں۔ موصل کے بعد تکریت داعش کے قبضے میں عراق کا دوسرا بڑا شہر ہے۔

دو روز قبل ضلع صلاح الدین کے گورنر رائد الجبور نے بتایا تھا کہ فوج نے بیجی آئل ریفائنری اور اس کے اطراف میں داعشی دہشت گردوں کا گھیرا توڑنے کے بعد ریفائنری کو کلیئر کرا لیا ہے اور ریفائنری پر عراقی فوج کا کنٹرول ہے۔