.

"امارات: بلیک لسٹ تنظیموں کو اپیل کا حق حاصل ہے "

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

متحدہ عرب امارات کے وزیر مملکت برائے خارجہ امور نے کہا ہے کہ دہشت گردی کے الزامات کے تحت بلیک لسٹ کی گئی تنظیمیں اپنے نام فہرست سے خارج کرانے کے لیے عدالتوں میں اپیل کر سکتی ہیں۔

العربیہ ڈاٹ نیٹ کے مطابق اماراتی وزیر انور قرقاش نے ‘‘ٹیوٹر’’ کے اپنے خصوصی صفحے پر ایک مختصر ٹویٹ میں کہا کہ ریاست کا قانون بلیک لسٹ کی گئی تظیموں کو حکومتی فیصلے کے خلاف عدالت میں دلائل کے ذریعے اپنا نام دہشت گرد گروپوں سے نکلوانے کا حق دیتا ہے۔ یہ ایک ایسا راستہ ہے جو دہشت گرد گروپوں کو اپنا قبلہ درست کرنے کی طرف لا سکتا ہے۔

خیال رہےکہ حال ہی میں متحدہ عرب امارات نے دہشت گرد تنظیم القاعدہ، دولت اسلامی عراق وشام، النصرہ فرنٹ اور اخوان المسلمون کو دہشت گرد قرار دے کران کی پابندی لگا دی تھی۔ اماراتی حکومت کے اس فیصلے پر بعض حلقوں کی جانب سے شدید ردعمل سامنے آیا تھا۔

اس ردعمل کے بعد ‘یو اے ای’ کے وزیر مملکت نے یہ وضاحت کر دی ہے کہ دہشت گردی کے تحت بلیک لسٹ کی گئی تنظیمیں عدالتوں کے ذریعے اپنا نام اس فہرست سے نکواسکتی ہیں۔ ان کا کہنا ہے کہ بلیک لسٹ کیے گئے گروپ خود کو عدالتوں میں یہ ثابت کریں ان کا دہشت گردی کی کسی صنف کے ساتھ کوئی تعلق نہیں اور نہ ہی وہ دہشت گردی کی حمایت یا مدد کرتے ہیں۔

متحدہ عرب امارات نے مصر، شام، لیبیا، عراق اور یمن سمیت کئی دوسرے عرب ممالک میں سرگرم تنظیموں کو دہشت گرد قرار دے کران پر پابندی لگا دی تھی۔ ان میں نمایاں نام عرب دنیا کی اعتدال پسند مذہبی سیاسی جماعت اخوان المسلمون، لبنان کی شیعہ ملیشیا حزب للہ، القاعدہ، داعش، احرار الشام النصرہ فرنٹ کے شامل ہیں۔