.

امریکا اور اتحادیوں کے داعش پر 23 فضائی حملے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

امریکا اور اس کے اتحادی ممالک کے لڑاکا طیاروں نے عراق اور شام میں سخت گیر جنگجو گروپ داعش کے ٹھکانوں پر جمعرات کو تیئس فضائی حملے کیے ہیں۔

امریکا کی قیادت میں مشترکہ ٹاسک فورس کی جانب سے جمعہ کو جاری کردہ بیان میں بتایا گیا ہے کہ لڑاکا طیاروں نے شام کے شہروں کوبانی،الرقہ اور الحسکہ کے نزدیک دس سے زیادہ فضائی حملے کیے ہیں اور ان میں داعش کی گاڑیوں ،عمارتوں اور ٹھکانوں کو تباہ کردیا گیا ہے۔ فضائی حملے میں داعش کے ایک بڑے یونٹ کو بھی نشانہ بنایا گیا ہے۔

دریائے فرات کے کنارے واقع شام کے شہرالرقہ پر امریکی اتحادیوں کے لڑاکا طیاروں نے تباہ کن بمباری کی ہے۔اس شہر کے نزدیک 24 دسمبر کو اردن کا ایک ایف سولہ لڑاکا طیارہ داعش کے خلاف مہم کے دوران گر کر تباہ ہوگیا تھا اور داعش کے جنگجوؤں نے اس کے نوجوان پائیلٹ کو گرفتار کر لیا تھا۔

الرقہ سے تعلق رکھنے والے داعش مخالف ایک گروپ نے جمعہ کو اطلاع دی ہے کہ اتحادی طیاروں نے شہر پر تیرہ فضائی حملے کیے ہیں اور یہ اردنی پائیلٹ کی گرفتاری کے بعد سے اس شہر پر تباہ کن بمباری ہے۔اس گروپ کا کہنا ہے کہ ان فضائی حملوں میں فروسیہ کے علاقے اور شامی فوج کے سترھویں ڈویژن کے اڈے کو بھی نشانہ بنایا گیا ہے۔اس اڈے پر اب داعش کا قبضہ ہے۔

برطانیہ میں قائم شامی آبزرویٹری برائے انسانی حقوق اور مقامی رابطہ کمیٹیوں نے بھی ان فضائی حملوں کی تصدیق کی ہے لیکن انھوں نے ان میں ہونے والے جانی نقصان کے بارے میں فوری طور پر کچھ نہیں بتایا ہے۔

ادھر پڑوسی ملک عراق کے شہروں التاجی ،الاسد ،فلوجہ ،بیجی ،القائم اور موصل میں اتحادی طیاروں نے داعش کے یونٹوں ،عمارتوں ،گاڑیوں ،آلات ،شپنگ کنٹینر اور ہتھیاروں کے ایک ڈپو پر گیارہ فضائی حملے کیے ہیں۔امریکا اور اس کے اتحادی ممالک کے طیاروں کے فضائی حملوں میں نشانہ بننے والے ان مذکورہ بالا شہروں میں داعش نے جون سے اپنی خلافت قائم کررکھی ہے۔