.

اسرائیلی حملے میں حزب اللہ کے متعدد کمانڈر ہلاک

صہیونی ہیلی کاپٹر کا شامی علاقے میں لبنانی جنگجوؤں پر میزائل حملہ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

اسرائیلی فوج کے ایک ہیلی کاپٹر نے شام میں گولان کی چوٹیوں کے سرحدی علاقے میں لبنان کی شیعہ ملیشیا حزب اللہ کے ایک ٹھکانے پر اتوار کو دو میزائل فائر کیے ہیں جس کے نتیجے میں تنظیم کے متعدد جنگجو مارے گئے ہیں۔

حزب اللہ کے المنار نیوز چینل نے ایک مختصر پیغام میں بتایا ہے کہ ''القنیطرہ میں صہیونیوں کے ایک راکٹ حملے میں حزب اللہ کے مجاہدین کا ایک گروپ شہید ہوگیا ہے۔ان کے نام بعد میں ظاہر کیے جائیں گے''۔

اس پیغام میں مزید بتایا گیا ہے کہ ''وہ صوبہ القنیطرہ کے ایک گاؤں مزرعۃ الامل میں تحقیقی مشن کے دوران مارے گئے ہیں''۔العربیہ کے نمائندے کی اطلاع کے مطابق اسرائیلی حملے میں حزب اللہ کے مقتول کمانڈر عماد مغنیہ کے بیٹے جہاد مغنیہ بھی مارے گئے ہیں۔

مقتولین میں حزب اللہ کے کمانڈر محمد عیسیٰ بھی شامل ہیں۔وہ اس شیعہ ملیشیا کی شام اور عراق میں کارروائیوں کے ذمے دار تھے۔قبل ازیں اے ایف پی نے اسرائیل کے ایک سکیورٹی ذریعے کے حوالے سے کہا تھا کہ یہ جنگجو صہیونی ریاست پر حملے کی تیاری کررہے تھے۔

برطانیہ میں قائم شامی آبزرویٹری برائے انسانی حقوق کی اطلاع کے مطابق اسرائیلی ہیلی کاپٹر نے شام کے سرحدی شہر القنیطرہ کے نزدیک ایک ہدف کو نشانہ بنایا ہے۔یہ علاقہ اسرائیل اور شام کے درمیان حد متارکہ جنگ (سیز فائرلائن) کے نزدیک واقع ہے۔یہ حد متارکہ جنگ شام کے گولان کی چوٹیوں کے حصے کو اسرائیل کے زیر قبضہ علاقے سے جُدا کرتی ہے۔

ذرائع کے مطابق حملے کے وقت فضا میں اسرائیلی ڈرون بھی پروازیں کررہے تھے۔گذشتہ ماہ شامی فوج نے صوبہ القنیطرہ کے اوپر اسرائیلی فوج کا ایک بغیر پائیلٹ جاسوس طیارہ مار گرایا تھا۔اس سے قبل اگست میں اسرائیلی فوج نے شام کا ایک بغیر پائیلٹ جاسوس طیارہ مار گرایا تھا اور کہا تھا کہ یہ شام کی جانب سے اسرائیل کی فضائی حدود میں آیا تھا۔