.

عراقی فورسز نے صوبے دیالا کو داعش سے آزاد کرالیا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

عراق کی سکیورٹی فورسز نے مشرقی صوبے دیالا کو سخت گیر جنگجو گروپ دولت اسلامی (داعش) کے قبضے سے آزاد کرا لیا ہے اور اس کے آبادی والے تمام علاقوں پر دوبارہ کنٹرول حاصل کر لیا ہے۔گذشتہ چار روز سے جاری لڑائی میں فریقین کے ایک سو سے زیادہ جنگجو مارے گئے ہیں۔

عراقی فوج کے اسٹاف لیفٹیننٹ جنرل عبدالعامر الزیدی نے سوموار کو دیالا کی داعش سے آزادی کا اعلان کیا ہے اور بتایا ہے کہ عراقی فورسز کو داعش کے خلاف لڑائی کے بعد اس صوبے کے تمام شہروں ،اضلاع اور سب اضلاع کا دوبارہ مکمل کنٹرول ہوگیا ہے۔

دیالا میں گذشتہ چند سے داعش کے جنگجوؤں اور عراقی سکیورٹی فورسز کے درمیان خونریز جھڑپیں ہورہی تھیں۔خاص طور پر اس کے قصبوں جلولا ،سعدیہ اور مقدادیہ کے نواحی علاقوں میں داعش کے جنگجوؤں اور عراقی فوج کے درمیان شدید لڑائی ہوئی ہے۔ان علاقوں پر داعش کا قبضہ تھا۔

عراقی فوج نے قبل ازیں اس صوبے کے مختلف علاقوں پردوبارہ قبضے کے لیے متعدد مرتبہ کوششیں کی تھیں لیکن اسے کامیابی نہیں ملی تھی۔اس نے گذشتہ جمعہ کو صوبائی دارالحکومت بعقوبہ سے شمال مشرق میں واقع شہر مقدادیہ کے آس پاس دیہات پر داعش کا قبضہ ختم کرانے کے لیے فیصلہ کن حملے کا آغاز کیا تھا۔

جنرل زیدی اور ضلعی کونسل کے سربراہ عدنان التمیمی کا کہنا ہے کہ اب اس پورے علاقے پر عراقی فورسز کا کنٹرول ہے۔جنرل زیدی کے بہ قول لڑائی میں حکومت نواز فورسز کے اٹھاون ارکان ہلاک اور دو سو اڑتالیس زخمی ہوئے ہیں جبکہ داعش کے پچاس سے زیادہ جنگجو مارے گئے ہیں۔

انھوں نے کہا کہ مقدادیہ کے شمال میں واقع دیہات میں داعش کے جنگجو اپنے پیچھے ہزاروں بم چھوڑ کر بھاگ گئے ہیں۔اب ان کو ٹھکانے لگانا اور ناکارہ بنانا ایک اہم چیلنج ہوگا۔عراقی جنرل نے مزید بتایا ہے کہ دیالا اور دوسرے صوبوں تک پھیلے حمرین پہاڑوں میں داعش کے خلاف لڑائی جاری ہے۔

دیالا میں داعش کے خلاف عراقی فورسز کو اس اہم فتح سے تقویت ملے گی اور وہ اب اس کے ہمسائے میں واقع صوبے صلاح الدین کی جانب پیش قدمی کریں گے جہاں صوبائی دارالحکومت تکریت سمیت مختلف شہروں اور دیہات پر داعش کا گذشتہ سال جون سے قبضہ ہے۔

عراق کے سنی آبادی والے پانچ شمالی ، شمال مغربی اور مشرقی صوبوں پر داعش نے جون سے اپنا کنٹرول قائم کررکھا ہے اور ان کے خلاف امریکا کی قیادت میں اتحادی ممالک کے لڑاکا طیارے اگست سے فضا سے بمباری کررہے ہیں جبکہ برسر زمین عراق کی وفاقی فورسز ،کرد جنگجو ،حکومت نواز شیعہ ملیشیائیں اور سنی قبائل لڑرہے ہیں۔