.

مقبوضہ القدس:ڈرائیور نے راہ گیروں پرکارچڑھا دی ،4 زخمی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

اسرائیل کے زیر قبضہ بیت المقدس میں ایک ڈرائیور نے شاہراہ پر کھڑے راہ گیروں پر کار چڑھا دی ہے جس کے نتیجے میں چار افراد زخمی ہوگئے ہیں۔اسرائیلی پولیس نے دعویٰ کیا ہے کہ اس شخص نے راہ گیروں کو چاقو گھونپنے کی بھی کوشش کی ہے۔

مقبوضہ بیت المقدس سے العربیہ کے نمائندے کی اطلاع کے مطابق واقعے میں زخمی ہونے والے افراد میں تین پولیس اہلکار ہیں۔اسرائیلی پولیس کی ترجمان لوبا سامری نے ایک بیان میں کہا ہے کہ ''ایک نوجوان نے پہلے راہ گیروں پر اپنی کار چڑھا دی اور پھر اس میں سے اترنے کے بعد ان لوگوں کو چاقو گھونپنے کی کوشش کی ہے۔ایک مسلح سکیورٹی گارڈ نے اس شخص کو گولی مار کر زخمی کردیا ہے''۔

خاتون ترجمان نے جمعہ کو پیش آئے اس واقعے کو دہشت گردی قراردیا ہے اوراس میں چار افراد کے زخمی ہونے کی تصدیق کی ہے۔یہ واقعہ مشرقی القدس کو مغربی القدس سے جدا کرنے والی لائن کے نزدیک اسرائیلی بارڈر پولیس کے ایک تھانے کے باہر پیش آیا ہے۔طبی عملے کا کہنا ہے کہ ان کے پاس پانچ زخمیوں کو لایا گیا ہے۔

واضح رہے کہ گذشتہ سال اکتوبر اور نومبر میں بھی مقبوضہ بیت المقدس میں اسی طرح کے متعدد واقعات پیش آئے تھے اور فلسطینی ڈرائیوروں نے یہودی راہ گیروں یا اسرائیلی سکیورٹی فورسز کے اہلکاروں کو اپنی گاڑیوں کے نیچے کچل دیا تھا جس کے نتیجے میں متعدد افراد ہلاک ہوگئے تھے۔ان تمام واقعات میں بھی حملہ آوروں کو موقع پر گولی مار کر زخمی کردیا گیا تھا۔

فلسطینی ڈرائیور کی جانب سے راہ گیروں پر کار چڑھانے کے اس واقعے سے مقبوضہ بیت المقدس میں کشیدگی میں اضافہ ہو گا۔یہ واقعہ اسرائیل میں عام انتخابات سے قبل اور فلسطینی قیادت کی جانب سے مقبوضہ علاقوں میں اسرائیل کے ساتھ سکیورٹی تعاون ختم کرنے کے اعلان کے ایک روز بعد پیش آیا ہے۔