.

داعش کا دمشق کے نواح میں فلسطینی مہاجر کیمپ پر قبضہ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

سخت گیر جنگجو گروپ دولت اسلامی عراق وشام (داعش) نے دمشق کے نواح میں واقع فلسطینی مہاجرین کے کیمپ یرموک کے بڑے حصے پر قبضہ کر لیا ہے۔

ایک عینی شاہد نے بتایا ہے کہ داعش کے جنگجوؤں نے بدھ کو حجراسود کے علاقے کی جانب سے یرموک کیمپ پر حملہ کیا تھا اور اس کے بعد سے وہاں لڑائی جاری ہے۔

یرموک کیمپ میں شام میں خانہ جنگی کے آغاز کے بعد سے صدر بشارالاسد کی وفادار فورسز اور باغی جنگجو گروپوں کے درمیان متعدد مرتبہ لڑائی ہوچکی ہے اور اس سے پہلے القاعدہ سے وابستہ تنظیم النصرۃ محاذ اور دوسرے باغی جنگجو گروپ بھی کیمپ پر یلغار کرچکے ہیں۔

برطانیہ میں قائم شامی آبزرویٹری برائے انسانی حقوق نے اپنے ذرائع کے حوالے سے اطلاع دی ہے کہ داعش کے جنگجوؤں نے کیمپ کی بعض مرکزی شاہراہوں پر قبضہ کر لیا ہے اور وہاں ابھی تک لڑائی جاری ہے۔کیمپ میں خوراک ،ادویہ اور پانی کی شدید قلت ہے۔

داعش کے جنگجو دمشق کے جنوب میں واقع علاقے حجر اسود کی جانب سے یرموک کیمپ میں داخل ہوئے تھے اور ان کی اب کیمپ میں موجود ایک مسلح فلسطینی گروپ کے ساتھ جھڑپیں جاری ہیں۔اگر ان کا اس کیمپ پر مکمل قبضہ ہوجاتا ہے تو پھر وہ شامی دارالحکومت کی جانب بھی وہاں سے پیش قدمی کرسکیں گے۔

یرموک کیمپ میں قریباً اٹھارہ ہزار فلسطینی مہاجرین مقیم ہیں۔وہ شامی فوج اور باغی گروپوں کے درمیان لڑائی کے نتیجے میں کسمپرسی کی زندگی گزار رہے ہیں اور انھیں ضروریات زندگی دستیاب نہیں ہیں۔ماضی میں النصرۃ محاذ اور شامی فوج کے درمیان جھڑپوں کے بعد کیمپ کے مکینوں کو کئی کئی دن تک ایک وقت کا بھی کھانا نہیں مل سکا تھا اور وہ فاقہ کشی پر مجبور ہوگئے تھے۔