.

لبنانی فوج کی شامی سرحد پر کارروائی، تین جنگجو ہلاک

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

لبنانی فوج نے شام کے ساتھ واقع سرحدی علاقے پر کنٹرول کے لیے منگل کی صبح ایک نئی کارروائی شروع کی ہے اور اس دوران جھڑپ میں تین نامعلوم جنگجو ہلاک ہوگئے ہیں۔

لبنانی فوج نے ایک بیان میں کہا ہے کہ جھڑپوں میں چار اور جنگجو زخمی ہوگئے ہیں۔اس نے یہ نہیں بتایا کہ ہلاک اور زخمی جنگجو کس گروپ سے تعلق رکھتے تھے۔تاہم بیان میں کہا گیا ہے کہ یہ کارروائی لبنان میں شہریوں اور فوجیوں پر حملے کرنے والے دہشت گردوں کے قلع قمع کے لیے کی جارہی ہے۔فوج نے جنگجوؤں کے ہتھیاروں کی بڑی تعداد کو تباہ کرنے کی بھی اطلاع دی ہے۔

لبنان کے سرحدی گاؤں راس بعلبک کے نواح میں واقع پہاڑی علاقے المخرمہ سے شام میں لڑنے والے جنگجو آئے دن دراندزی کرتے رہتے ہیں اور ان کی لبنانی فوجیوں سے جھڑپیں ہوتی رہتی ہیں۔

گذشتہ سال اگست میں شام میں صدر بشارالاسد کی وفادار فوج کے خلاف برسرپیکار مختلف جہادی گروپوں سے تعلق رکھنے والے جنگجوؤں نے لبنان کے مشرقی علاقے میں واقع قصبے عرسال اور اس کے نواح میں پولیس اور فوج کی چوکیوں پر حملہ کردیا تھا۔انھوں نے القاعدہ کی شامی شاخ النصرۃ محاذ سے وابستہ ایک مشتبہ شخص کی گرفتاری کے بعد وادی بقاع میں دھاوا بولا تھا۔

لبنان کے مقامی علماء کی ثالثی کے نتیجے میں فوج اور جنگجوؤں کے درمیان جنگ بندی کا سمجھوتا طے پایا تھا جس کے بعد جنگجوؤں نے سات فوجیوں کو رہا کردیا تھا لیکن وہ عرسال سے شامی علاقے کی جانب جاتے ہوئے بعض لبنانی فوجیوں کو یرغمال بنا کر ساتھ لے گئے تھے۔ لبنانی آرمی نے تب اپنے بائیس فوجیوں کے لاپتا ہونے کی تصدیق کی تھی۔