.

شام:شمال میں تباہ کن بم حملے،داعش کی پیش قدمی

مارع شہر کے نزدیک داعش اور النصرۃ محاذ کے درمیان جھڑپیں

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

شام کے تزویراتی اہمیت کے حامل شہر مارع کے نزدیک دو کاربم دھماکے ہوئے ہیں جن میں پندرہ افراد ہلاک ہوگئے ہیں۔اس علاقے میں سخت گیر جنگجو گروپ دولت اسلامی عراق وشام (داعش) کے جنگجوؤں کی مخالفین کے ساتھ جھڑپیں ہوئی ہیں۔داعش کے جنگجو اس علاقے پر قبضے کے لیے پیش قدمی کررہے ہیں۔

برطانیہ میں قائم شامی آبزرویٹری برائے انسانی حقوق کے ڈائریکٹر رامی عبدالرحمان نے بدھ کو ایک بیان میں بتایا ہے کہ ''مارع کے نزدیک دو مقامات پر دو کار بم دھماکے ہوئے ہیں۔یہ علاقہ شام میں القاعدہ سے وابستہ تنظیم النصرۃ محاذ کے کنٹرول میں ہے۔

مارع شمالی شہر حلب سے چالیس کلومیٹر شمال میں ترکی کی سرحد کی جانب جانے والی مرکزی شاہراہ پر واقع ہے۔آبزرویٹری کے مطابق مارع شہر میں پہلے کار بم دھماکے میں سات افراد ہلاک ہوئے ہیں اور دوسرا دھماکا شہر کے نزدیک واقع علاقے میں ہوا ہے۔اس میں آٹھ افراد مارے گئے ہیں۔

ان دھماکوں کے بعد داعش کے جنگجوؤں کی النصرۃ محاذ اور دوسرے اسلامی گروپوں کے درمیان جھڑپیں چھڑ گئی تھیں۔رامی عبدالرحمان نے فوری طور پر ان جھڑپوں میں ہلاکتوں کے بارے میں کوئی اطلاع نہیں دی ہے۔داعش نے دونوں کار بم دھماکوں کی ذمے داری بھی قبول نہیں کی ہے۔تاہم آبزرویٹری کے سربراہ کا کہنا ہے کہ اسی گروپ پر ان حملوں میں ملوّث ہونے کا شُبہ ہے۔