.

قطر میں جمعہ کے دوران دکانیں اور دفاتر بند کرنے کا حکم جاری

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

قطر نے ایک نیا قانون پاس کیا ہے جس کے مطابق جمعہ کی نماز کے دوران تمام دکانوں، کیفے، ریستورانوں، شاپنگ مالز، دفاتر حتیٰ کہ کلینکوں کو بھی 90 منٹ تک بند کردیا جائے گا اور اس فیصلے کی خلاف ورزی کرنے والوں کو 10000 قطری ریال [270٫000 روپے] کے جرمانے کا سامنا کرنا پڑے گا۔

قطر کے انگریزی روزنامے 'دی پیننسولا' کے مطابق یہ نیا حکمنامہ کل جاری کیا گیا ہے اور اسے قطری امیر شیخ تمیم الثانی نے بذات خود جاری کیا ہے۔ اس حکم کے نتیجے میں جمعہ کی پہلی اذان کے ساتھ ہی دکانیں فوری طور پر بند کردی جائیں گی۔

اخبار کا کہنا ہے کہ یہ قانون سرکاری گزٹ میں شائع ہوگا جس کے بعد یہ نافذ العمل سمجھا جائیگا۔ قطر 2022ء میں فٹ بال کے عالمی کپ فیفا ورلڈ کپ کی میزبانی کرے گا اور اس موقع پر لاکھوں فٹبال کے شوقین قطر میں آئیں گے جس کی وجہ سے ایک نئی بحث کا آغاز ہوگیا جس میں سوال کیا جارہا ہے کیا یہ غیر ملکی شراب پی سکیں گے؟

اس سے پہلے 2011ء میں قطری حکومت نے 'پیرل' نامی ایک جزیرے پر واقع ریستورانوں اور کیفے میں شراب کی فروخت کے لائسنس معطل کردئیے تھے۔

اس فیصلے کی کوئی سرکاری وضاحت جاری نہیں کی تھی۔