.

عراق: صدام حسین کے اہم معاون عزت الدوری جھڑپ میں ہلاک

الدوری عراق میں داعش کی کارروائیوں کے ماسٹر مائنڈ سمجھے جاتے تھے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

دولت اسلامیہ عراق وشام [داعش] کے رکن اور سابق عراقی صدر صدام حسین کے اہم معاون عزت الدوری عراق میں جاری فوجی آپریشن کے دوران ہلاک ہوگئے ہیں۔

عراقی صوبے صلاح الدین کے گورنر رائد الجبوری نے العربیہ نیوز چینل کے نمائندے سے بات کرتے ہوئے الدوری کی ہلاکت کی تصدیق کی اور بتایا کہ الدوری عراق میں داعش کا ماسٹر مائنڈ تھا اور اس کی ہلاکت سے داعش پر کاری ضرب لگی ہے۔

الجبوری کا کہنا تھا "سیکیورٹی فورسز نے تکریت میں آلس کی آئل فیلڈز کے پاس ایک آپریشن کے دوران سابق نائب صدر اور بعث پارٹی کے کمانڈر عزت الدوری کو مار ڈالا ہے۔"

گورنر کا کہنا ہے کہ الدوری کی شناخت کے لئے نعش کا ڈی این اے ٹیسٹ کیا جارہا ہے۔

سابق عراقی صدر صدام حسین کی حکومت میں اعلیٰ گورننگ باڈی انقلابی کمانڈ کونسل کے وائس چئیرمین کے عہدے پر تعینات رہنے والے 72 سالہ عزت الدوری عراق پر امریکی حملے کے بعد فرار ہوگئے تھے اور انہیں موجودہ شیعہ حکومت کے خلاف جاری شورش کا ماسٹر مائنڈ سمجھا جاتا ہے۔

اس سے پہلے پچھلے سال جولائی کے دوران داعش کے جنگجوئوں کی جانب سے عراق کے دوسرے بڑے شہر موصل پر قبضے کے بعد دوری نے ایک آڈیو ریکارڈنگ میں انتہاپسند گروپ کی تعریف کرتے ہوئے تمام عراقیوں سے ملک کی آزادی کے لئے متحد ہونے کا مطالبہ کیا تھا۔