.

اسرائیلی ٹینکوں کی غزہ پر راکٹ حملے کے بعد گولہ باری

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

اسرائیلی فوج نے غزہ کی پٹی کے شمالی علاقے میں اسلامی تحریک مزاحمت (حماس) کے ایک ٹھکانے پر گولہ باری کی ہے۔

اسرائیلی فوج کی خاتون ترجمان نے ایک بیان میں فلسطینی مزاحمت کاروں کی تنصیب کو نشانہ بنانے کی تصدیق کی ہے اور کہا ہے کہ غزہ کی پٹی سے اسرائیلی علاقے کی جانب راکٹ فائر کیے جانے کے بعد جوابی گولہ باری کی گئی ہے۔غزہ میں ایمرجنسی سروسز کے ترجمان نے بتایا ہے کہ اسرائیلی حملے میں کوئی شخص زخمی نہیں ہوا ہے۔

قبل ازیں اسرائیلی فوج نے ایک بیان میں کہا کہ اسرائیل کے جنوبی علاقوں میں جمعرات کی شب غزہ کی پٹی کی جانب سے راکٹ فائر کیے جانے کے بعد انتباہی سائرن بجائے گئے تھے۔حملے میں کوئی جانی نقصان نہیں ہوا تھا۔یہ حملہ ایسے وقت میں کیا گیا تھاجب صہیونی ریاست کے قیام کی سالگرہ کی تیاری کی جارہی تھیں۔

اسرائیل اور غزہ کی حکمراں حماس کے درمیان اس وقت عارضی جنگ بندی جاری ہے۔صہیونی فوج نے گذشتہ سال موسم گرما میں انہی راکٹ حملوں کو روکنے کے نام پرغزہ کی پٹی پر جارحانہ جنگ مسلط کی تھی جس کے نتیجے میں دو ہزار ایک سو چالیس فلسطینی شہید ہوگئے تھے جبکہ فلسطینی مزاحمت کاروں کے ساتھ جھڑپوں اور ان کے راکٹ حملوں میں چھیاسٹھ اسرائیلی فوجی اور سات شہری ہلاک ہوگئے تھے۔