.

کینیڈین وزیر اعظم کا دورہ عراق، 139 ملین ڈالر امداد کا وعدہ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

کینیڈا کے وزیر اعظم سٹیفن ہارپر عراق میں شدت پسند جنگجوئوں کے خلاف جنگ کی حمایت کے اظہار اور عراق، شام، اردن اور لبنان میں موجود مہاجرین کی مدد کے لئے 139 ملین ڈالر کی امداد دینے کا وعدہ لے کر بغداد کا اچانک دورہ کیا ہے۔

ہارپر نے اس موقع پر عراقی ہم منصب حیدر العبادی سے بغداد میں ملاقات کی اور اس کے بعد عراق کے خودمختار علاقے کردستان کا رخ کیا جہاں پر کینیڈا کی جانب سے فوجی ٹرینر تعینات ہیں تاکہ داعش کے جنگجوئوں کا مقابلہ کرنے کے لئے کرد جنگجوئوں کو ضروری ٹریننگ دی جاسکے۔

حیدر العبادی کے دفتر کے مطابق دونوں اتحادی ممالک کے عہدیداران نے داعش کے خلاف عراق میں لڑی جانیوالی جنگ اور اس کی بین الاقوامی برادری کی جانب سے حمایت پر تبادلہ خیال کیا۔

کینیڈا وہ واحد مغربی ملک ہے جس نے عراق اور شام میں داعش کے ٹھکانوں پر بمباری کی امریکی مہم میں شمولیت اختیار کی ہے۔

ہارپر نے اپنے دورے کے موقع پر 139 ملین ڈالر کی امداد کا وعدہ کیا تاکہ خطے میں مشکلات کے شکار مہاجرین کی مدد کی جاسکے۔ اس سے پہلے بھی کینیڈا عراق کو 67 ملین ڈالر دینے کا وعدہ کر چکا ہے۔

کینیڈین وزیر اعظم کا کہنا تھا "ہم یہاں پر نہ صرف اپنے تعلقات پر بات چیت کرنے بلکہ داعش کے مقابلے کے لئے حکمت عملی تیار کرنے کے لئے بھی ملاقات کررہے ہیں۔"

ہارپر نے عراقی عوام کو منتخب کرتے ہوئے کہا "آپ کو اس بات کا یقین ہونا چاہئیے ہے کہ ہم آپ کے ساتھ کام کرتے رہیں گے اور یہ تعاون صرف سیکیورٹی معاملات پر ہی نہیں بلکہ اس میں عراقی عوام کے ترقیاتی منصوبوں پر بھی تعاون جاری رہے گا۔"

ہارپر کا کہنا تھا "کینیڈا داعش کی جانب سے دھمکیاں دینے اور معصوم عراقی شہریوں کو نشانہ بنانے کی کارروائیوں پر خاموش تماشائی نہیں بنا رہے گا۔"

عبادی نے اس موقع پر داعش مخالف اتحاد میں کینیڈا کے کردار کو موثر قرار دیتے ہوئے عالمی برادری سے مطالبہ کیا کہ وہ انتہاپسند تنظیموں سے درپیش خطرات کے مقابلہ میں اپنی فوجیں میدان میں لائیں کیوںکہ "دہشت گردی سے صرف عراق کو ہی نہیں بلکہ پورے خطے اور دنیا کو خطرات لاحق ہیں۔"