یہودی انتہا پسند ربی کو مسجد اقصیٰ میں داخلے کی اجازت

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

اسرائیلی حکومت نے ایک شدت پسند مذہبی رہ نما یہودا گلیک کو مسجد اقصیٰ میں داخل ہونے اور مذہبی رسومات کی ادائی کی اجازت دے دی ہے۔ دوسری طرف فلسطینی شہریوں کی جانب سے یہودا گلیک کے قبلہ اول میں داخلے پر سخت رد عمل کا بھی امکان ہے۔

العربیہ ڈاٹ نیٹ کے مطابق اسرائیل کے ایک عدالتی ذرائع نے اطلاع دی ہے کہ شدت پسند یہودی ربی ’’یہودا گلیک‘‘ کو ایک ماہ میں ایک بار مسجد اقصیٰ میں داخل ہونے کی اجازت دے دی ہے۔

خیال رہے کہ یہودا گلیک کو کچھ عرصہ قبل قبلہ اول میں اس خدشے کے پیش نظر داخل ہونے سے روک دیا گیا تھا کہ ان کی آمد سے فلسطینی شہری مشتعل ہوسکتے ہیں تاہم گلیک نے حکومت کے فیصلے کو عدالت میں چیلنج کردیا تھا۔ گذشتہ روز بیت المقدس کی ایک مجسٹریٹ عدالت نے یہودا گلیک کو ایک ماہ میں ایک بار مسجد اقصیٰ کے صحن میں داخل ہونے، ایک کیمرہ اور اسمارٹ موبائل فون ساتھ رکھنے اور یہودی آباد کاروں کو ہمراہ لانے کی اجازت دے دی ہے۔

یہودا گلیک کو اسرائیل کے ان انتہا پسند یہودی ربیوں میں شمار کیا جاتا ہے جو مسجد اقصیٰ میں یہودیوں کو عبادت کا حق دلوانے کے لیے مہمات میں پیش پیش ہیں۔ یہودا گلیک ماضی میں متعدد مرتبہ یہودی آباد کاروں کے ڈنڈہ بردار گروپوں کو ساتھ لے مسجد اقصیٰ میں داخل ہوتے رہے ہیں جس کے بعد فلسطینیوں اور یہودی آباد کاروں کے درمیان کئی پر تصادم بھی ہوا۔

پچھلے سال 29 اکتوبر کو مشرقی بیت المقدس میں ایک فلسطینی شہری نے یہودا گلیک پر قاتلانہ حملہ کیا تھا جس کے نتیجے میں گلیک زخمی ہوگیا تھا۔ صہیونی پولیس نے کارروائی کرکے گلیک کو فائرنگ کرکے شہید کردیا تھا۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں