.

سابق اسرائیلی وزیر اعظم کو کرپشن کے الزام میں آٹھ ماہ قید

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

سابق اسرائیلی وزیر اعظم ایہود اولمرٹ کو ایک امریکی سپانسر سے غیر قانونی طور پر پیسے قبول کرنے پر آٹھ ماہ قید کی سزا سنا دی گئی ہے۔

پیر کے روز مقبوضہ بیت المقدس کی ضلعی عدالت کی جانب سے جاری کردہ فیصلے کے نتیجے میں اسرائیل کے سابق سربراہ اور فلسطینیوں کے ساتھ تاریخی امن معاہدے کے داعی شخص کا ڈرامائی زوال ہوگیا ہے۔

ایہود اولمرٹ پر ماہ مارچ کے دوران ایک ری ٹرائل میں فرد جرم عائد کی گئی تھی۔ یہ سزا ایک پہلے کی چھ ماہ قید کے بعد سامنے آئی ہے جو کہ انہیں رشوت لینے کے الزام میں سنائی گئی تھی۔ ان دونوں سزائوں کے بعد سابق اسرائیلی رہنما کا سیاسی کیرئیر ختم ہوگیا ہے۔

ایہود اولمرٹ کے وکلاء کے مطابق وہ اس فیصلے کے خلاف اپیل دائر کریں گے۔

سابق اسرائیلی وزیر اعظم کو سال 2009ء میں کرپشن کے الزامات کے تحت استعفیٰ دینا پڑ گیا تھا۔ ان کی اقتدار سے علیحدگی کے نتیجے میں قدامت پسند بینجمن نیتن یاہو کی انتخابات میں کامیابی کی راہ ہموار ہوگئی تھی اور اس کے بعد امن کی تمام کوششیں ناکام ہوگئی ہیں۔