.

یو این ایلچی کا بشار الاسد کے خلاف اعلان 'بغاوت'

سٹیفن ڈی میستورا کا شامی صدر سے اقتدار چھوڑنے کا مطالبہ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

شام کے لئے یو این سیکرٹری جنرل کے خصوصی مندوب سٹیفن ڈی میستورا نے شامی صدر بشار الاسد سے حکومت چھوڑنے کا مطالبہ کیا ہے۔ میستورا نے بشار الاسد کی حکومت سے بیدخلی کے لئے فوجی دباو میں اضافے کا بھی مطالبہ کیا ہے۔

امریکی اخبار 'ڈیلی بیسٹ' نے یو این مندوب کے جنیوا میں شامی اپوزیشن رہنماوں سے ملاقاتوں کے حوالے سے بتایا ہے کہ ڈی میستورا نے شامی مسئلے کے سیاسی حل کی راہ ہموار کرنے کی خاطر اس بات پر زور دیا کہ بشار الاسد اقتدار سے الگ ہو جائیں۔

انہوں نے کہا کہ شام کے اندر فوجی دباو میں اضافہ اقوام متحدہ کے ذریعے نہیں بلکہ امریکا کے توسط سے ہی ممکن ہے۔ انہوں نے کہا کہ سیکیورٹی کونسل میں بعض ممالک شامی بحران کے سیاسی حل کی راہ میں رکاوٹیں ڈال رہے ہیں، امریکا کو یہ رکاوٹیں ختم کرنا ہوں گی۔

اخبار 'ڈیلی بیسٹ' نے یو این ایلچی کی ترجمان سے رابطہ کر کے ان سے منسوب بیان کی وضاحت چاہی، تاہم ڈی میستورا کی خاتون ترجمان نے ان سے منسوب بیان کی تردید یا تصدیق یہ کہتے ہوئے کرنے سے انکار کر دیا کہ وہ یو این ایلچی کی وفود سے ہونے والی ملاقاتوں میں زیر بحث مندرجات پر تبصرہ کرنے کی مجاز نہیں۔

درایں اثنا شام کی ایک غیر حکومتی تنظیم کی سربراہ منی الجندی ایڈووکیٹ نے بتایا کہ ڈی میستورا نے شام کے بارے میں اپنے پرانے موقف میں تبدیلی لائی ہے۔ منی الجندی شامی بحران کے حل کی خاطر جنیوا میں ہونے والے مذاکرات میں شریک رہی ہیں۔