.

شام میں 'جیسا کرو گے، ویسا بھرو گے' کا اصول رائج

'جیش الاسلام' نے 'داعش' کے جنگجووں کے قتل کی ویڈیو جاری کر دی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

شامی دارلحکومت دمشق کے نواح میں سرگرم جنگجو گروپ 'جیش الاسلام' نے دولت اسلامیہ المعروف 'داعش' کے متعدد جنگجووں کو ہلاک کرنے کا دعوی کیا ہے۔ جیش الاسلام کے بقول انہوں نے یہ اقدام داعش کے ہاتھوں چند روز قبل اپنے بے گناہ کارکنوں کے قتل کے جواب میں اٹھایا ہے۔

داعش کی طرز پر جاری ویڈیو کے اندر شامی علاقے الغوطہ الشرقیہ میں زھران علوش کی سربراہی میں لڑنے والی جیش الاسلام نامی تنظیم نے دمشق کے نواح میں ہونے والی جھڑپوں میں مبینہ طور پر حراست میں لئے گئے داعش کے کارکنوں کو قطاروں میں دکھایا گیا۔

ویڈیو میں "زیر حراست جنگجو، داعش کی صفوں میں لڑنے اور اس امر کا اعتراف کرتے ہیں کہ انہیں بشار الاسد کی فوج کے بجائے دیگر گروپوں سے لڑنے کا حکم دیا گیا تھا۔"

الحدث کی رپورٹ کے مطابق جاری کردہ ویڈیو ایک ماہ قبل ریکارڈ کی گئی، اس میں سعودی، کویتی، شامی اور شیعہ مسلک کے پیروکار جیش الاسلام کی قید میں دکھائے گئے ہیں۔ ان پر داعش کے ہاتھ پر بیعت کرنے کا بھی الزام تھا۔

ویڈیو کے آخر میں داعش کے زیر حراست جنگجووں کو سیاہ لباس میں پابچولاں چلتے دیکھا جا سکتا ہے۔ ان کے بندھے ہاتھوں کی زنجیریں جیش الاسلام کے نارنجی رنگ میں ملبوس کارکنوں نے تھام رکھی ہیں ہیں۔

یاد رہے نارنجی رنگ کا لباس گوانتانامو بے کے قیدیوں کو پہنایا جاتا تھا اور داعش بھی اپنے ہاتھوں موت سے دوچار ہونے والے افراد کو یہی لباس پہناتی تھی۔

ویڈیو کے اندر مخالفین کو ہلاک کرنے والے دلدوز مناظر کی مختلف زاویوں سے تصاویر اور کلپس موجود ہیں۔ جیش الاسلام کے بقول مخالف گروپ کے جنگجووں کے اجتماعی قتل کی کارروائی داعش کی جانب سے گذشتہ ماہ 25 تاریخ کو ایک ایسی ہی ویِڈیو میں اپنے حامیوں کے قتل کا ردعمل ہے۔