.

عراق : داعش نے کار بم دھماکے کی ذمے داری قبول کر لی

شمالی قصبے خالص میں شیعہ ملیشیا حشد الشعبی کو حملے میں نشانہ بنایا گیا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

داعش کے جنگجوؤں نے عراق کے شمالی قصبے خالص میں تباہ کن کار بم دھماکے کی ذمے داری قبول کرنے کا دعویٰ کیا ہے۔منگل کے روز اس بم دھماکے میں پانچ افراد ہلاک اور گیارہ زخمی ہوگئے تھے۔

صوبہ دیالا کے حکام نے بتایا ہے کہ خالص میں یہ بم دھماکا ایک معروف مقامی ڈاکٹر کے مکان کے باہر ہوا تھا۔داعش نے جہادی فورمز پر بدھ کو پوسٹ کیے گئے بیان میں کہا ہے کہ اس کاربم حملے میں شیعہ ملیشیاؤں پر مشتمل حشد الشعبی کو نشانہ بنایا گیا تھا۔

خالص دارالحکومت بغداد سے ساٹھ کلومیٹر شمال میں صوبہ دیالا میں واقع ہے۔عراقی حکومت نے جنوری میں اس صوبے کو داعش کے جنگجوؤں سے پاک قرار دیا تھا۔اس کے بعد وہاں داعش کا کوئی متعیّن ٹھکانا تو نہیں رہا ہے لیکن وہ اپنے روایتی حربے استعمال کرتے ہوئے وہاں کاربم دھماکے یا خودکش بم حملے کررہے ہیں۔