.

شام میں اسرائیلی ڈرون حملے میں حزب اللہ کے دو جنگجو ہلاک

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

شام کے سرحدی قصبے حضر کے نزدیک اسرائیل کے بغیر پائیلٹ جاسوس طیارے کے میزائل حملے میں لبنان کی شیعہ ملیشیا حزب اللہ کے دو جنگجو ہلاک ہوگئے ہیں۔

برطانیہ میں قائم شامی آبزرویٹری برائے انسانی حقوق کے ڈائریکٹر رامی عبدالرحمان نے اپنے نیٹ ورک کے حوالے سے صحافیوں کو بتایا ہے کہ اسرائیلی طیارے نے قصبے حضر میں ایک کار کو میزائل حملے میں نشانہ بنایا ہے۔اس میں سوار حزب اللہ کے دو ارکان ہلاک اور تین افراد زخمی ہوگئے ہیں۔ان تین افراد کا شامی حکومت کی حامی ایک عوامی ملیشیا سے تعلق رکھتا ہے۔

حضر میں دروز آباد ہیں اور یہ اسرائیل کے زیر قبضہ گولان کی چوٹیوں اور صوبہ دمشق کے درمیان حد متارکہ جنگ (سیز فائر لائن) پر واقع ہے۔مقبوضہ بیت المقدس میں اسرائیلی فوج کی ایک خاتون ترجمان نے اس میزائل حملے کے بارے میں کوئی تبصرہ کرنے سے گریز کیا ہے۔

حال ہی میں صدر بشارالاسد کی فوج کے خلاف جنگ آزما باغی جنگجوؤں نے شام کے جنوبی علاقے میں دروز آبادی والے علاقوں کی جانب پیش قدمی کی ہے جس کے بعد اسرائیل کے زیر قبضہ گولان کی چوٹیوں اور دوسرے علاقوں میں آباد دروز کمیونٹی میں تشویش پائی جارہی ہے۔

یاد رہے کہ اسرائیلی ہیلی کاپٹروں نے جنوری میں بھی شام کے سرحدی صوبے القنیطرہ میں ایک کار پر میزائل حملہ کیا تھا۔اس حملے میں ایرانی پاسداران انقلاب کا ایک میجر جنرل اور حزب اللہ کے پانچ ارکان مارے گئے تھے۔ان میں شیعہ ملیشیا کے مقتول کمانڈر عماد مغنیہ کا بیٹا بھی شامل تھا۔