.

عراق: پارلیمان میں وزیراعظم کا اصلاحات پیکج منظور

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

عراق کی پارلیمان نے وزیراعظم حیدرالعبادی کے پیش کردہ اصلاحات کے پیکج کی متفقہ طور پر منظوری دے دی ہے۔

وزیراعظم کے مجوزہ پیکج میں ملک میں بدعنوانیوں کے خاتمے کے لیے اقدامات تجویز کیے گئے ہیں۔اس کے تحت بہت سے حکومتی عہدے ختم کردیے جائیں گے، فرقہ وارانہ اور جماعتی بنیاد پر سرکاری ملازمتوں میں کوٹے ختم کردیے جائیں گے اور بدعنوانیوں کی از سرنو تحقیقات کاآغاز کیا جائے گا۔

واضح رہے کہ عراق میں شدید گرمی کے باوجود مظاہرین گذشتہ کئی ہفتوں سے سرکاری خدمات کی عدم فراہمی بالخصوص بجلی کے گھنٹوں تعطل کے خلاف احتجاجی مظاہرے کررہے ہیں۔عراق کے مختلف علاقوں میں درجہ حرارت پچاس ڈگری سینٹی گریڈ تک بڑھ چکا ہے اور بجلی کی عدم دستیابی کی وجہ سے شہریوں کو شدید مشکلات کا سامنا ہے۔

عراقی کابینہ نے اتوار کو اپنے غیر معمولی اجلاس میں اتفاق رائے سے اصلاحات کے اس پیکج کی منظوری دی تھی۔حیدرالعبادی اس پیکج کے تحت اپنے پیش رو سابق وزیراعظم نوری المالکی کو نائب صدر کے عہدے سے ہٹانا چاہتے ہیں جو مبینہ طور پر دوبارہ برسر اقتدار آنے کے لیے سازشوں کے جال بُن رہے ہیں۔تاہم انھوں نے اس الزام کی تردید کی ہے۔

واضح رہے کہ عراق کے سرکردہ عالم دین آیت اللہ علی السیستانی نے ملک سے بدعنوانیوں کے خاتمے کا مطالبہ کیا تھا اور ان کے اس مطالبے پر مجوزہ اصلاحات کی جارہی ہیں۔ان کا اہم حصہ نائب صدور اور نائب وزیر اعظم کے عہدوں کا خاتمہ ہے۔