.

اماراتی فوج نے عدن سے برطانوی شہری رہا کرا لیا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

متحدہ عرب امارات کی مسلح افواج کے ڈپٹی سپریم کمانڈر اور صدر مقام ابوظہبی کے ولی عہد الشیخ محمد بن زاید آل نھیان نے برطانوی وزیر اعظم ڈیوڈ کیمرون کو بذریعہ ٹیلی فون اطلاع دی ہے کہ عدن میں اماراتی فورس اس مقام پر پہنچ گئی ہے جہاں دہشت گردی تنظیم 'القاعدہ' نے برطانوی شہری رابرٹ ڈگلس سٹیورٹ کو یرغمال بنا رکھا ہے۔

اماراتی نیوز ایجنسی 'وام' کے مطابق متحدہ عرب امارات کی فورس نے رابرٹ ڈگلس کو گذشتہ شب خفیہ سراغرسانی کی کارروائی کے ذریعے رہا کرانے کے بعد عدن میں ایک محفوظ مقام پر پہنچا دیا گیا، جہاں سے بعد ازاں انہیں فوج کے خصوصی طیارے میں ابوظہبی پہنچایا گیا۔

عدن میں اماراتی فورس کی حالیہ کارروائی سے ابوظہبی کا دہشت گردی کے خاتمے کے لئے عزم بالجزم ثابت ہوتا ہے۔ نیز یہ کارروائی یو اے ای اور برطانیہ کے درمیان دوستانہ تعلقات کی بھی مظہر ہے، جس سے دہشت گردی پر قابو پانے کے لئے دوست ممالک کے درمیان سیکیورٹی کوارڈی نیش اور تعاون کی اہمیت اجاگر ہوتی ہے۔

یاد رہے چونسٹھ سالہ برطانوی رابرٹ ڈگلس یمن میں پیٹرولیم انجینئر کے طور پر خدمات سرانجام دے رہے تھے۔ انہیں فروری دو ہزار چودہ میں حضر موت کے علاقے سے گرفتار کیا گیا۔

ابوظہبی پہنچنے پر سٹیورٹ کا استقبال برطانوی حکام اور اماراتی حکام نے کیا۔ رہائی کے بعد ان کی بات اہل خانہ سے کرائی گئی جس میں رابرٹ نے اپنی خریت کی بابت اپنے خاندان کو آگاہ کیا۔ انہیں ضروری طبی معائنے کے بعد جلد ہی برطانیہ اپنے خاندان سے ملنے کے لئے الوداع کہا جائے گا۔

پاکستان نے کہا ہے کہ بھارت کی طرف سے پیشگی شرائط کی وجہ سے دونوں ملکوں کے مشیران برائے قومی سلامتی کے مذاکرات نہیں ہو سکتے۔